ڈاکٹر ولاء جمال کی نظم "تجھ کو بھلانے کی کوششیں"

تجھ کو بھلانے کی کوششیں
تمام ناکام ہو گئیں
کبھی نہ بھول سکوں
یہی میرا یقین ہے

وہ دن جب توُ نے مجھ سے کہا
تُو ہے میرا
آنکھیں بند کر کے یقین کر لیا
سمجھنے سے قاصر رہی مگر
حد سے زیادہ تجھ سے پیار کیا

تجھ کو بھلانے کی کوششیں
تمام ناکام ہو گئیں
کبھی نہ بھول سکوں
یہی میرا یقین ہے

سوچا تجھ سے دور رہوں
لیکن ہمیشہ تو میرے ساتھ رہا
ہر گزرنے والا دن اِس پیار میں
بڑھتا گیا حد سے زیادہ
اب تڑپ ہی میری قسمت ہوگئی

تجھ کو بھلانے کی کوششیں
تمام ناکام ہو گئیں
کبھی نہ بھول سکوں
یہی میرا یقین ہے

ہر کمی کو پورا کیا تُو نے
پھر بھی ہمارے ہر لمحے
میری یاد میں زندہ ہیں
جو میں نے سنا ہے دیکھا ہے
وہ بھول سکوں ممکن نہیں

تجھ کو بھلانے کی کوششیں
تمام ناکام ہو گئیں
کبھی نہ بھول سکوں
یہی میرا یقین ہے

پتا نہیں بہہ رہے ہیں یہ آنسو کہاں سے
پتا نہیں آرہے ہیں یہ دُکھ کہاں سے
نہ تو مجھے خوشی ملی ہے
نہ تیرا ساتھ رہا ہے

تجھ کو بھلانے کی کوششیں
تمام ناکام ہو گئیں
کبھی نہ بھول سکوں
یہی میرا یقین ہے

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *