چین کی صنعتی پیداوارسست روی کا شکار

economyچین کی صنعتی پیداوار عالمی مالی بحران کے آغازسے اب تک سست ترین رفتار سے بڑھ رہی ہے اور فکسڈ ایسٹس میں سرمایہ کاری بھی سست روی کا شکار ہے۔ اس سست رو ترقی کا ایک ثبوت یہ ہے کہ دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہونے کے باوجود ، ان دنوں چینی معیشت تیزی سے اپنی گزشتہ رفتار کھوتی جا رہی ہے۔
گزشتہ برس اگست سے اب تک کارخانوں کی پیداوار کی شرح 6.9فیصد تک بلند ہوئی ہے۔ آج بیجنگ میں چین کے قومی ادارہ شماریات نے کہا کہ جولائی تک یہ شرح 9فیصد تھی۔رواں برس جنوری سے اگست تک کے عرصے میں پرچون کی فروخت میں11.9فیصد جبکہ فکسڈ ایسٹس میں سرمایہ کاری میں 16.5فیصد کا اضافہ ہوا۔
آج جاری کیا جانے والا ڈیٹا اس خدشے کو دوچند کر دیتا ہے کہ رواں برس کی تیسری سہ ماہی میں چین کی معاشی ترقی کی شرح وزیر اعظم لی کیکنگ کے 2014ء کے ہدف، جوتقریباً7.5 فیصد ہے، سے بھی نیچے گر جائے گی۔ کل جاری ہونے والے اعدادوشمار اندازوں سے کہیں کم تھے اور اگست میں درآمدات بہت گر گئی ہیں۔تاہم، اس ہفتے وزیراعظم لی نے کہاہے کہ حکومت معمولی مالی مفادات پر بھروسہ نہیں کرے گی تاکہ پیداوار کی حوصلہ افزائی جاری رہے ۔ لہٰذا ہم ہر صورت اپنی حکمتِ عملیوں کو اپنائے رکھیں گے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *