یتیم وفاقی ملازمین کی سوتیلی ماں

محمد عرفان چوہدری

Muhammad Irfan chaudhry

سوتیلی ماں کا سوتیلے بچوں کے ساتھ جو رویہ ہوتا ہے وہ کوئی ڈھکی چُھپی بات نہیں ہے عموماََ اس بات کو بعض جگہوں پر ضرب المثل کے طور پر بھی لیا جاتا ہے جوکہ صحیح بھی ہے کیونکہ سوتیلی ماں ہمیشہ اپنے بچوں کو سوتیلے بچوں پر فوقیت دیتی ہے جو کہ ایک فطری عمل ہے مگر سبھی مائیں ایسی نہیں ہوتی بعض مائیں سوتیلے بچوں کو اپنے بچوں سے زیادہ پیار کرتی ہیں مگر اُس کے پیچھے بھی کوئی نہ کوئی اُس کا اپنا مفاد پنہاں ہوتا ہے جن میں سے ایک تویہ ہے کہ شوہر کی وفات کے بعد جائیداد کا بڑا حصہ بچوں میں منقسم ہو جانا ہے اِس مفاد پرستی کی بناء پر اُسے چار و ناچار سوتیلے بچوں سے پیار کا اظہار کرنا پڑتا ہے اور دُوسری وجہ عورت کا بانجھ ہونا ہے کہ اپنے بچے نہ ہونے کی وجہ سے سوتیلے بچوں کو پیار کرنا پڑتا ہے شائد آپ میری اِن دونوں باتوں سے اتفاق نہ کریں کیونکہ ہر کسی کو اپنی یا کسی اور کی بات سے متفق ہونا یا نہ ہونا اُ س کا جمہوری حق ہے اب اگر جمہوری حق کی بات نکل ہی پڑی ہے تو ذرا گوش گزار کرتا چلوں کہ حال ہی میں اسلام آباد پولیس کی اَپ گریڈیشن کر دی گئی ہے جس کے مطابق کانسٹیبل کو گریڈ 5 سے گریڈ7 ، ہیڈ کانسٹیبل کو گریڈ 7 سے 9 اور اے ایس آئی کو گریڈ 9 سے 11 میں ترقی دے دی گئی ہے اور اس ترقی سے ذرائع کے مطابق تقریباََ 10,280 پولیس اہلکار مستفید ہوں گے جن میں 7,759 کانسٹیبل، 1423 ہیڈ کانسٹیبل اور 1,079 اے ایس آئی شامل ہیں اور یقیناًحکومت کا یہ فیصلہ خوش آئند ہے اور ایسے فیصلوں سے ملازمین میں کام کرنے کی لگن زیادہ ہو جاتی ہے آپ بھی سوچ رہیں ہوں گے کہ بات تو سوتیلی ماں کی ہو رہی تھی درمیان میں یہ پولیس اہلکار کہاں سے آ گئے؟ بات سیدھی اور سادہ سی ہے کہ سرکاری ملازمین وہ سوتیلے بچے ہیں کہ جب تک حکومت جیسی سوتیلی ماں کو کوئی مفاد نہ ہو وہ ان سوتیلے بچوں سے پیار نہیں کرتی میَں یہاں پولیس اہلکاروں کی ترقی میں رکاوٹ بالکل نہیں بننا چاہتا چاہے یہ ترقی اسلام آباد میں عمران خان کے دھرنے کے پیشِ نظر کی گئی ہو یا پھر کوئی اور وجہ ہو میں تو یہاں سوتیلی ماں سے سوال کرنا چاہتا ہوں کہ وفاق کے اور بھی بہت سے یتیم ملازمین ہیں جن کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک ہو رہا ہے اوراُن کا کوئی پُرسانِ حال نہیں ہے اُن کے مرحوم وفاقی باپ کی کوئی جائیداد بھی نہیں ہے کہ جن کے بدلے حکومتی سوتیلی ماں اُن کے سر پر شفقت بھرا ہاتھ رکھے اُن یتیم ملازمین کو اپنی آغوش میں لے لے کے کب تک وہ ایڈہاک جیسے سوتیلے بھائیوں اور کنٹریکٹ جیسی سوتیلی بہنوں کا ڈر دل میں سمائے سہما رہے ، کب تک وہ لوگوں کے طعنے سُنے اور کب تک وہ اپنے سگے بچوں کو بہتری کے جھوٹے دلاسے دے، کب تک وہ ہسپتالوں کے آؤٹ ڈور سے اپنا پیٹ کاٹ کر بیماری کی دوا لے؟
’’دروغ گوئی نہیں عیب اس زمانے میں
جو بولا سچ ، وہی دُنیا ئے زر میں خوار ہوا
غریبِ شہر ہی پھرتا ہے مُنہ چُھپائے ہوئے
امیرِ شہر کبھی بھی نہ شرمسار ہوا‘‘
میری آواز ہے کے جدید خطوط پر استوار انفارمیشن ٹیکنالوجی کے کانوں تک پہنچے کہ مُلک کے لئے معمار پیدا کرنے والے ادارے کے ملازمین پچھلے چار سال سے اپ گریڈیشن کی راہ تک رہے ہیں حالانکہ اس ضمن میں وفاق کی جانب سے ایک مراسلہ نمبری F.No.1(3)Imp/2015-630 مورخہ 07-July-2015 کو جاری کیا گیا جس کے مطابق یکم جولائی2015سے وفاقی ملازمین کے بنیادی پے سکیل (Revise) دُہرائے جائیں مگر یہاں پر ایک اور بد بختی کہ سوتیلی ماں نے وفاقی ملازمین کو کسی اور کی گود میں دیا ہوا ہے یعنی کے سوتیلی ماں کی سوتیلی سہیلی!
’’نہ مانگ سکتا ہے وہ،اور نہ چھین سکتا ہے
پھنسا وہی ہے جو ہمیشہ وضع دار ہوا
زمین کو بیچ دیا، آسمان کو بیچ دیا
وطن میں میرے یہی ایک کاروبار ہوا‘‘
ہر سال بجٹ کے نام پر اُن پہ مہنگائی کا بم گرایا جاتا ہے مگر پچھلے چار سال سے ایک بار بھی حکومتی سوتیلی ماں کی جانب سے دس فیصد روٹی کا لُقمہ جو کہ اُس نے شائد بانجھ ہونے کی بناء پر وفاقی یتیم ملازمین پر ترس کھا کر دیا مگر سوتیلی سہیلی نے ابھی تک اُن ملازمین کے پیٹ میں نہیں پہنچنے دیا جس کی وجہ سے اب خالی پیٹ میں چوہوں نے بھی دوڑنا چھوڑ دیا ہے اس لئے اگر تو وفاقی باپ اپنے ملازم بچوں کو خوش و خرم دیکھنا چاہتا ہے تو فوری طور پر وفاقی ملازمین کی سوتیلی ماں کو حُکم جاری کرے کہ وہ اپنی سوتیلی سہیلی کے توسط سے وفاق کے ملازمین کو فی الفور مستقل کرنے کے ساتھ ساتھ حکومتی سوتیلی ماں کے ذمے پچھلے چار سال کے واجبات ادا کرے اور ملازمین کے اسلام آباد پولیس اہلکاروں کی طرح اپ گریڈیشن کے احکامات بھی صادر فرمائیں کیونکہ وفاقی باپ کے پاس ایک یہی تو کام ہے باقی تو وہ حکومتی جوڑُو کا غلام ہے کے اُس کے دل میں جو آئے وہ کرے اس لئے بناء مفاد پرستی کے شفقت بھرا ہاتھ رکھے تا کہ ملازمین کی دُعاؤں سے جو سوتیلی ماں پر بُرے حالات بنے ہوئے ہیں اور شریکے نے دھرنے کے نام پر اودھم مچا رکھا ہے اُن تمام بلاؤں سے چھٹکارہ پا سکے نہیں تو یتیم کی بد دُعا سیدھا عرش تک جاتی ہے اور کوئی کنٹینر ، کوئی آنسو گیس کے شیل اُس کی راہ میں رکاوٹ نہیں بن سکتے اور جب یہ بد دُعا اُوپر والے کی عدالت میں پہنچ گئی تو نیچے والوں کی عدالت کا کمیشن بھی کام نہیں آئے گا۔
’’آج کا دن تو گزر ہی جائے گا
فکر کل کی ذہن کو بے کل کرے
بے ثباتی پہ ہے یہ کیسا یقین
مسئلہ کوئی ہمارا حل کرے‘‘

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *