80 سالہ بزرگ کے خلاف قتل کی درخواست، پولیس چکرا کر رہ گئی!

لاہور-جائیداد کے حصول کے لیے 61 برس قبل اپنے حقیقی باپ کو مبینہ طور پر قتل کرنے والے شخص کے خلاف اندراجِ مقدمہ کے عدالتی حکم نے پولیس کو امتحان میں ڈال دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق کئی سال دفن رہنے والا مقدمہ 5 سال قبل سامنے آیا جب ضلع بھکر کے علاقے موضع خانسر کے رہائشی ذیشان حیدر نے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج بھکر کی عدالت میں ادراجِ مقدمہ کے لیے درخواست گذاری، جس میں الزام عائد کیا گیا کہ اس کے چچا محمد علی نے 1956ء میں جائیداد کی خاطر اس کے دادا محبت علی کو قتل کر دیا تھا بعض وجوہات کی بناء پر مقتول کے بیٹوں نے ملزم کے خلاف کوئی کاروائی نہ کی، ملزم نے بتایا کہ اسکے والد نے اسے سارا وقوعہ بتایا کہ محمد علی شروع سے ہی جھگڑالو انسان تھا جس کی وجہ سے پورا خاندان اس سے تنگ رہتا تھا، اسکا اپنے والد سے صرف یہ مطالبہ تھا کہ ساری جائیداد اسکے حوالے کر دی جائے مگر دادا اس بات سے متفق نہ تھے کیونکہ انکا کہنا تھا کہ میری ساری زندگی میں میرے تمام بیٹے متحد رہیں اور جائیداد کی آمدن تما م بیٹوں میں برابر تقسیم کی جائے گی اور سب کو میری وفات کے بعد قانونی حق ہوگا لیکن محمد علی نے 15 نومبر 1956ء کو طعش میں آکر اپنے حقیقی والد محبت علی کو ڈنڈے کے وار سے قتل کر ڈالا اور اسکی لاش کو دفنا دیا تاہم بات چھپ نہ سکی اور پورا علاقہ اسے خونی کے نام سے پکارنے لگا۔ لہٰذا عدالت سے استدعا کی جاتی ہے کہ ملزم کو گرفتار کرتے ہوئے مقدمہ ری اوپن کیا جائے اور ملزم کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *