لڈو کھیلنا حرام ہے !

2

لاہور۔ آپ کو وہ وقت تو یاد ہو گا جب بچپن میں وقت گزارنے کیلئے لڈو کھیلا کرتے تھے اور دانے گرا کر سامنے آنے والے نمبروں کے مطابق اپنی اپنی ”گیٹی“ آگے بڑھاتے تھے۔ یہ کچھ زیادہ پرانی بات نہیں ہے اور ہم میں سے کچھ لوگ تو اب بھی یہ گیم کھیلتے ہیں، اگرچہ یہ گیم کھیلنا کیلئے ’بچہ‘ ہونا ضروری نہیں کیونکہ ہر عمر کا شخص ہی اس کے سحر میں جکڑا نظر آتا ہے۔ ایک جانب یہ گیم بہت سادہ ہے تو دوسری جانب اتنی ہی دلچسپ بھی ہے جو ایک گتے پر بنی ہے اور کھیلنے کیلئے کم از کم دو کھلاڑیوں کا ہونا ضروری ہے اور اگر کھلاڑی چار ہو جائیں تو لطف بھی دوبالا ہو جاتا ہے۔
یہ تو ہو گئی ماضی کی بات! مگر یہ 2017ءہے اور ہر چیز جدت اختیار کر چکی ہے، تو ایسے میں بھلا لڈو کیوں نہ جدید ہوتی؟ کچھ لوگوں نے سمارٹ فونز کیلئے اس گیم کو بنایا تو دیکھتے ہی دیکھتے اسے کھیلنے والوں کی تعداد لاکھوں میں جا پہنچی اور ہر جانب اس کے چرچے ہونے لگے۔ زیادہ تر لوگوں نے اپنے بچپن کی یاد تازہ کرنے کیلئے اسے کھیلنا شروع کیا لیکن افسوسناک بات یہ ہے کہ کچھ لوگوں نے اسے لڑکیوں کو حراساں کرنے کیلئے بھی استعمال کرنا شروع کر دیا۔
لیکن اب اس سے بھی زیادہ حیران کن معلومات سامنے آئی ہیں جنہیں جان کر آپ یقینا اس گیم کو دوبارہ کھیلنے کے بارے میں کئی بار سوچیں گے کیونکہ انٹرنیٹ پر ہزاروں صارفین یہ دعویٰ کر رہے ہیں کہ لڈو یا اس سے ملتی جلتی کوئی بھی گیم کھیلنا جس میں ’دانہ‘ (ڈائس) پھینکا جاتا ہے، کھیلنا حرام ہے۔ اور دلچسپ امر یہ ہے کہ بہت سے لوگوں نے اپنے طور پر مذہبی رہنماﺅں سے اس بابت بات چیت کی اور پھر فیس بک پر دیگر لوگوں کو بھی متنبہ کیا۔

ایک صارف نے دوست سے اس بارے میں سن کر مزید جاننے کی کوشش کی اور لکھا ”ابھی ایک دوست سے سنا ہے کہ لڈو حرام ہے! اور دیگر ایسے تمام کھیل جن میں ’دانے‘ کا استعمال ہوتا ہے۔ کیا کوئی مذہبی رہنماءمیری مدد کر سکتا ہے؟“

ایک اور صارف نے لکھا ”اسلام میں ہر وہ کھیل حرام ہے جس میں دانے کا استعمال ہوتا ہے! کیا ہم واقعی اپنے مذہب کے بارے میں جانتے ہیں؟ “

ایک اور صارف نے لکھا ”لڈو سٹار ایک جواءہے۔۔۔ جواءحرام ہے۔۔۔ اور تم سب ....ہو۔“

ایک صارف نے وارننگ دیتے ہوئے لکھا ”وارننگ الرٹ! میں نے ابھی ابھی دریافت کیا ہے کہ لڈو سمیت ہر وہ کھیل جس میں ’دانے‘ کا استعمال ہوتا ہے، جوئے اور بغیر جوئے کے حرام ہے، میں نے یہ گیم اپنے سمارٹ فون سے ختم کر دی ہے۔“

ایک اور صارف نے بھی ایسے ہی خیالات کا اظہار کیا اور لکھا ”لڈو سٹار حرام ہے کیونکہ جواءحرام ہے۔“

ایک اور صارف کا کہنا تھا ”لڈو اور مونوپولی سمیت ہر وہ کھیل جس میں ’دانے‘ کا استعمال ہوتا ہے پہلے سے ہی اسلام میں حرام ہے اور یہ صحیح مسلم میں بھی لکھا ہے۔ ’دانے‘ کیساتھ کھیلنا اپنے ہاتھ سور کے خون میں بھگونے کے مترادف ہے:۔“

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *