دلیپ کمار کی شاہ رخ خان کو اپنا سگا بیٹا ماننے کے پیچھے کیا وجہ ہے؟

ممبئی: بالی ووڈ کے لیجنڈ اداکار دلیپ کمار اور ان کی اہلیہ سائرہ بانو بھارتی فلموں کے کنگ شاہ رخ خان کواپنا سگا بیٹا مانتے ہیں تاہم اس کے پیچھے ایک خاص وجہ ہے۔

لیجنڈ اداکار دلیپ کمار آج اپنی 96 ویں سالگرہ منارہے ہیں، 11 دسمبر 1922 کو پاکستان کے شہر پشاور میں محمد یوسف کے نام سے جنم لینے والے دلیپ کمار کا رشتہ بالی ووڈ کنگ شاہ رخ خان سے بے حد خاص ہے۔ دلیپ کمار اور سائرہ بانو کی کوئی اولاد نہیں ہے لیکن وہ شاہ رخ خان کو اپنے سگے بیٹے کی طرح  چاہتے ہیں تاہم اس کے پیچھے  ایک خاص وجہ ہے جس کا ذکر سائرہ بانو نے ایک انٹرویو کے دوران کیا تھا۔

گزشتہ برس ایک انٹرویو کے دوران اداکارہ سائرہ بانو نے شاہ رخ خان سے پہلی ملاقات کا احوال بتاتے ہوئے کہا تھا کہ جب شاہ رخ خان نے پہلی فلم ’دل آشنا‘سائن کی تھی تو ہماری (میری اور دلیپ صاحب کی) ان سے ملاقات ہوئی تھی میں ہمیشہ دلیپ صاحب سے کہتی ہوں کہ اگر ہمارا کوئی بیٹا ہوتا تو بالکل شاہ رخ جیسا ہوتا کیونکہ شاہ رخ خان اور دلیپ صاحب کے بال بالکل ایک جیسے ہیں، یہی وجہ ہے کہ جب بھی میں شاہ رخ سے ملتی ہوں تو ان کے بالوں میں انگلیاں پھیرتی ہوں۔ جب وہ دلیپ صاحب کو دیکھنے آئے تھے  تو انہوں نے پوچھا تھا کہ آج آپ میرے بالوں میں انگلیاں نہیں پھیریں گی شاہ رخ کی یہ بات سن کر مجھے بہت خوشی ہوئی۔

دوسری جانب شاہ رخ خان بھی دلیپ کمار کو اپنے والد کی طرح مانتے ہیں اور ان سے بے حد محبت کرتے ہیں۔ شاہ رخ خان نے ایک انٹرویو کے دوران بتایاتھا کہ وہ بچپن سے ہی دلیپ  صاحب کو جانتے ہیں دلیپ صاحب اور میرے والد دونوں دلی کی ایک ہی گلی میں رہتے تھے۔ بچپن میں میں دلیپ صاحب سے کئی بار ملاتھا، میرا اور ان کا ایک جذباتی رشتہ ہے۔

شاہ رخ خان نے انٹرویو کے دوران ایک واقعہ بتاتے ہوئے کہا تھا کہ بہت سال بعد جب میں نے ایک آفس میں دلیپ کمار کی جوانی کی تصویر دیکھی تو کہا ارے یہ تو میں ہوں تصویر میں وہ کافی حد تک میری طرح دکھ رہے تھے  یا یہ کہوں کہ میں ان کی طرح دکھ رہاتھا لیکن دلیپ صاحب کے ساتھ میرارشتہ اس سے کہیں بڑھ کر ہے۔ دلیپ صاحب اور سائرہ جی نے ہمیشہ مجھے اپنے بیٹے کی طرح سمجھا ہے۔

واضح رہے کہ اداکار دلیپ کمار کی 96 ویں سالگرہ کے موقع پر بالی ووڈ کے شہنشاہ امیتابھ بچن سمیت ان کے چاہنے والے ان کے لیے نیک خواہشات اور صحتیابی کی دعا کررہے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *