گورنمنٹ آفیسرز کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی کے "جنگل میں منگل....."

" شاہد نسیم چوہدری "

07.11.17 کو میرا کالم بعنوان گورنمنٹ آفیسرز کوآپریٹو ھاؤسنگ سوسائٹی لاہور کی اٹھائیس سالہ کارکردگی قومی اخبارات میں شائع ہوا ،جس میں کم آمدنی والے گورنمنٹ آفیسرز کی ہاؤسنگ سوسائٹی بارے کوآپریٹو انتظامیہ اور اس وقت کی انتظامیہ سوسائٹی کی اٹھائیس سال کی "کارکردگی" کی نشاندہی کی گئی تھی، جو کہ نہ ہونے کے برابر تھی،گورنمنٹ آفیسرز کوآپریٹو ھاؤسنگ سوسائٹی کے تقریبا (2454)دو ہزار چار سو چون ممبران ہیں،جن میں سے زیادہ ممبران کے واجبات ادا شدہ ہیں،لیکن وہ اس آس پر بیٹھے ہیں کہ سوسائٹی میں ڈویلپمنٹ تو جیسے تیسے ہے اگر سوسائٹی میں بجلی اور گیس مل جائے تو وہ وہاں پر اپنا گھر بنا سکیں جسکا سہانا خواب محکمہ کو آپریٹو نے اٹھائیس برس پہلے دکھایا تھا،لیکن محکمہ کو آپریٹواٹھائیس برس گزر جانے کے باوجود اپنی ذمہ داری سے عہدہ برآں نہیں ہو سکا،اس سوسائٹی میں ذیادہ تر چھوٹے ملازمین نے ایک کنال کے پلاٹ کیلئے اپنے عزیز و اقارب،دوست احباب،بہن بھائی کو ساتھ ملا کر اپنے نام سے اپنے اپنے محکموں کے توسط سے اس سوسائٹی میں گھر بنانے کیلئے پلاٹ حاصل کئے،چھوٹے ملازمین اتنی سکت نہیں رکھتے تھے کہ وہ اکیلے کنال کے پلاٹ کیلئے درخواست دیں،اپنے گھر کے حصول اور اپنے بچوں کے مستقبل کیلئے پلاٹ کی ڈاؤن پیمنٹ جمع کرانے کیلئے کسی نے اپنی بیوی کی چوڑیاں بیچیں،کسی نے اپنی بیٹی کے جہیز کیلئے جمع رقم پلاٹ کیلئے دے دی،کسی نے اپنی چھت بنانے کیلئے اپنے عزیزو اقارب کی منت سماجت کرکے ادھار رقم لی،غرض کہ ہر کسی نے اپنی اپنی بساط کے مطابق پلاٹ کیلئے ڈاؤن پیمنٹ رقم اکٹھی کی اور محکمہ کوآپریٹو سوسائٹی کو جمع کرادی،وقت گزرتا گیا،ممبران قسطیں جمع کراتے رہے،لیکن محکمے کی طرف سے ڈویلپمنٹ اس طرح نہیں ہوئی جس طرح ہونی چاہیے تھی، گورنمنٹ آفیسرزکو آپریٹو ھاؤسنگ سوسائٹی لاہور کو بنے ہوئے انتیس سال سے زیادہ کا عرصہ گزر گیا ہے،لیکن وہاں پر ڈویلپمنٹ کا کام مکمل نہیں ہوا،بجلی اور گیس دستیاب نہیں ہو سکی،کیاانتیس سال کا عرصہ کم ہوتاے،اتنے عرصے میں تو ایک نئی نسل جوان ہو جاتی ہے،ان تمام باتوں کو مد نظر رکھتے ہوئے ممبران نے اپنا حق لینے کی ٹھان لی ہے،پہلے دن سے اور شروع سے بننے والے متاثرہ ممبران نے آئندہ GOCHSکے ہو نے والے سوسائٹی کے الیکشن میں باقاعدہ فاؤنڈرز گروپ کے نام سے کاشف منیر چوہدری کی قیادت میں حصہ لینے کا فیصلہ کیا، تاکہ ادھورے کام مکمل اور بجلی گیس کی فراہمی کیلئے عملی اقدامات کئے جائیں، سوسائٹی کے افسردہ اور نا امید ممبران کو انکے حقوق دلانے کیلئے فاؤنڈرز گروپ کے قیام کو ممبران سوسائٹی نے خندہ پیشانی سے خوش آمدید کہا،محکمے کی طرف سے 19.11.17 کو سوسائٹی کے نئے الیکشن کا اعلان کر دیا گیا، الیکشن کااعلان ہوتے ہی اٹھائیس سال تک سوسائٹی پر"ملی بھگت" سے راج کرنے والے اور سوسائٹی ممبران کا خون چوسنے والے "مافیا" نے الیکشن رکوانے کیلئے محکمے کو طرح طرح کی درخواستیں دینا شروع کر دیں،ہر طرح کے جتن کئے کہ کسی طرح الیکشن نہ ہوں،لیکن انکا کوئی ہتھکنڈہ کام نہ آیا،الیکشن ہوئے اورفاؤنڈرز گروپ کے تمام امیدواران بھاری اکثریت سے کامیاب ہو گئے،فاؤنڈرز گروپ میں کاشف منیر چوہدری صدر، ندیم اکرام نائب صدر،چوہدری ظفر اقبال سیکریٹری،ناز محمود فنانس سیکریٹری،محمد امین خان انتظامیہ کمیٹی بلاک اے،سعید محی الدین انتظامیہ کمیٹی بلاک اے،سید اسد عباس انتظامیہ کمیٹی بلاک بی،عبدالغفور انتظامیہ کمیٹی بلاک بی،محمد اکرم انتظامیہ کمیٹی بلاک سی،اکبررشید انتظامیہ کمیٹی بلاک سی،عرفان الحق قریشی بلاک سی،محمد شاہد نسیم انتظامیہ کمیٹی بلاک ڈی منتخب ہوئے، محسوس یہ ہو رہا تھا کہ الیکشن جیتنے کے بعد فاؤنڈر گروپ بھی فوٹو شوٹ پر ہی گزارہ کرے گا اورسابقہ انتظامیہ کی طرح زبانی جمع خرچ اور ہوائی باتیں ہی کرے گا،لیکن فاؤنڈر گروپ کی ایک سال کی کارکردگی نے تمام خدشات غلط ثابت کر دئے،پچھلے دنوں انتظامیہ سوسائٹی فاؤنڈر گروپ نے سالانہ جنرل میٹنگ کا سائیٹ پر انعقاد کر کے ممبران کو حیران کر دیا،اورانتیس سال تک جنگل کا منظر پیش کرتی اور ڈویلپمنٹ کے حوالہ سے جمود کا شکار سوسائٹی میں آج ایک سال بعد محسوس ہو رہا تھا کہ یہاں"جن" کام کر گئے ہیں ، سوسائٹی کا خوبصورت مین داخلی راستہ آہنی گیٹوں کے ساتھ تعمیر ہو گیا ہے،A اور B بلاک میں سڑکیں بن گئی ہیں اور انکے ساتھ ساتھ مٹی ڈال کر انکو محفوظ بنا دیا گیا ہے،A اور B بلاک کی باؤنڈری وال کو مکمل کرادیا گیا ہے،درمیانی گرین بیلٹ میں قد آور کھجور کے درخت اور دوسرے پودے لگا دئے گئے ہیں،،سیکورٹی بیریئرز بنا دئے گئے ہیں،بجلی لگ چکی اور برقی قمقمے روشن ہو گئے ہیں،سوئی گیس کی منظوری ہو چکی ہے،اور جلد ہی اس پر کام شروع ہو جائے گا، A بلاک میں مسجد کی تعمیر کا کام تیزی سے جاری ہے،C اور D بلاک میں کوئی اپروچ روڈ ہی نہیں تھی،جسکی وجہ سے ان بلاک میں ڈویلپمنٹ نہ ہو سکی،اب ان بلاکس کیلئے اپروچ روڈ کی تعمیر جاری ہے،نئی انتظامیہ سوسائٹی فاؤنڈرز گروپ نے سب سے اہم کام یہ کیا ہے کہ سوسائٹی کا آفس نیپئر روڈ سے شفٹ کر کے سائٹ کے مین گیٹ پر تعمیر کر لیا ہے، جس سے سوسائٹی امیج بہتر ہواہے ،اور سائٹ کے حسن میں بھی اضافہ ہوا ہے،اب ممبران کو پلاٹوں کی خریدوفروخت،ٹرانسفر اور تعمیراتی کاموں کے سلسلے میں درکار کاغذی کاروائی کیلئے نیپیئر روڈ نہیں جانا پڑا کرے گا، سوسائٹی سے متعلقہ تمام امور اسی آفس میں ڈیل ہوا کریں گے، آج صرف ایک سال میں کاشف منیر کی قیادت میں فاؤنڈرز گروپ کی ٹیم نے ثابت کیا ہے، کہ اگر نیک نیتی سے کام کیا جائے تو اللہ اس میں برکت ڈال دیتا ہے،سالانہ جنرل میٹنگ کے موقع پر فاؤنڈرز گروپ کی طرف سے گورنمنٹ آفیسرز کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی کے ایک سال کے آمدن اور اخراجات کے اعداد وشمار پیش کرتے ہوئے صدر کاشف منیر نے کہا کہ آج سے ایک سال قبل موجودہ انتظامیہ نے چارج سنبھالا تو اس وقت سوسائٹی کے اکاؤنٹ میں فنٖڈز موجود نہ تھے،پہلی انتظامیہ ممبران سے گورنمنٹ ٹیکسز جمع کر کے اپنے روزمرہ کے اخراجات چلا رہے تھے،جوکہ افسوسناک تھا،موجودہ انتظامیہ نے ایک ٹیم ورک کے تحت تمام چیلنجز کا ڈٹ کر مقابلہ کیا،جسکا نتیجہ زمینی حقائق کی روشنی میں آج ہم سب کے سامنے ہے،سوسائٹی جو انتیس سال تک جنگل کا منظر پیش کرتی رہی، اس "جنگل" میں ہماری ٹیم نے صرف ایک سال میں" منگل" کا سماں بنا دیا، صدر کاشف منیر نے اعادہ کی کہ ہم گورنمنٹ آفیسرز کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی کے تمام ممبران کو جی او آر اسٹیٹ ٹائپ سروسز اور سہولیات مہیا کریں گے،جس کیلئے ہماری ٹیم دن رات کوشاں ہے،اس موقع پر ممبران نے سوسائٹی انتظامیہ کو اگلے سال کیلئے تمام ترقیاتی کاموں اور دوسرے امور کی اجازت دی،اور حکام بالا سے سوال کیا کہ کیا ایک لمبے عرصے تک اس سوسائٹی پر راج کرنے والی انتظامیہ سے پوچھا نہیں جانا چاہیے کہ انتیس سال تک اس سوسائٹی کے ساتھ کھلواڑ کیوں کیا گیا..؟،اور ترقیاتی کام انجام نہ دینے کے باوجود اپنی چھتری کیوں مہیا کئے رکھی...؟؟

 

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *