مودی نے پاکستان آنے کی دعوت قبول کر لی

Moodi Nawazہندوستان کے وزیراعظم نریندر مودی نے آئندہ سال ہونے والی سارک کانفرنس میں شرکت کے لیے پاکستان آنے کی دعوت قبول کرلی ہے۔ جمعے کو شنگھائی تعاون تنظیم (ایس سی او) کے پندرہویں سالانہ اجلاس کے موقع پر روس کے شہر اوفا میں وزیراعظم نوازشریف اور اْن کے ہندوستانی ہم منصب نریندر مودی کے درمیان ملاقات ہوئی، جس میں دونوں رہنماؤں نے دوطرفہ اورعلاقائی اہمیت کے امور پر تبادلہ خیال کیا۔ دونوں وزرائے اعظم کی ملاقات کے بعد ہندوستان کے خارجہ سیکریٹری ایس جے شنکر نے پاکستانی ہم منصب کے ہمراہ مشترکہ بریفنگ کے دوران اعلان کیا کہ ہندوستانی وزیراعظم نریندر مودی نے اگلے سال سارک کانفرنس میں شرکت کے لیے دورہ پاکستان کی دعوت قبول کرلی ہے۔ ایس جے شنکر نے بتایا کہ دونوں ممالک کے مابین درج ذیل اقدامات پر اتفاق کیا گیاہے۔
دہشتگردی سمیت تمام حل طلب مسائل پر بات چیت کے لیے نئی دہلی میں دونوں ممالک کے نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزز کی ملاقات
ورکنگ باونڈری اور لائن آف کنٹرول پر جاری کشیدگی میں کمی کے لیے ڈی جی بارڈر سیکیورٹی فورس، ڈی جی پاکستان رینجرز کے جلد اجلاس اورڈائریکٹر جنرل آف ملری آپریشنز (ڈی جی ایم اوز) روابط پر اتفاق
دونوں ممالک کا ایک دوسرے کے ماہی گیروں کو15 دن میں کشتیوں سمیت رہا کرنے کا فیصلہ
مذہبی سیاحت کو آسان بنانے کے لیے طریقہ کار وضع کرنے کا فیصلہ
ممبئی حملہ کیس میں آوازوں کے نمونے اور دیگر شہادتوں کے تبادلہ کا فیصلہ
پاکستان کے خارجہ سیکریٹری اعزاز چوہدری نے بریفنگ کے دوران بتایا کہ خوشگوار ماحول میں ہونے والی ملاقات میں دونوں رہنماؤں نے دوطرفہ اور علاقائی مفاد کے امور پر تبادلہ خیال کے ساتھ ساتھ اس بات پر اتفاق کیا کہ امن کے قیام کو یقینی بنانا اور ترقی کو فروغ دینا پاکستان اور ہندوستان کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔ اعزاز چوہدی نے کہا کہ ’’دونوں رہنماؤں نے دہشتگردی کی مذمت کرتے ہوئے جنوبی ایشیاء سے اس لعنت کے خاتمے کے لیے تعاون پر اتفاق کیا۔‘‘ دونوں وزرائے اعظم کے مابین اوفا کے کانگریس ہال میں ہونے والی ملاقات تقریباً ایک گھنٹے تک جاری رہی۔ پاکستان کی طرف سے وزیراعظم کے مشیر برائے امور خارجہ و قومی سلامتی سرتاج عزیز اور وزیراعظم کے معاون خصوصی طارق فاطمی جبکہ ہندوستان کی طرف سے سیکریٹری خارجہ، قومی سلامتی کے مشیر اور وزارت خارجہ کے ترجمان ملاقات میں شریک ہوئے۔ مئی 2014 کے بعد سے وزیراعظم نواز شریف اور ہندوستانی وزیراعظم نریندر مودی کی یہ پہلی باضابطہ ملاقات تھی۔ دونوں رہنما ستمبر 2014 میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس اور کٹھمنڈو میں سارک اجلاس میں بھی آمنے سامنے آئے تھے لیکن دوطرفہ بات چیت ممکن نہ ہوسکی تھی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *