ذہین افراد طویل عمر پاتے ہیں: تحقیق

Habiba Adan Salat has brought 2 year old Haraga who has eye infection and is severely malnourished to a Health centre for treatment, Dollow, Somalia The Somali district of Dollow is situated on the Somali / Ethiopian border.  Dollow town, the district capital, is the border crossing point and is contiguous with Dollow Ado on the Ethiopian side. Dollow is a key transit point between Somalia and Ethiopia in the current crisis with over 1,700  crossing between the two countries on a daily basis. To date 70,000 Somali refugees have arrived in the Dollow Ado camp in Ethiopia. Jennifer O'Gorman/July 2011/Dollow, Somalia

ذہین افراد اوسط شخص کے مقابلے میں نا صرف زیادہ ہوشیار ہوتے ہیں بلکہ ایک تازہ ترین تحقیق سے یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ ان کی زندگی بھی لمبی ہوتی ہے۔اس تحقیق کی رو سے وراثت میں ملنے والی وہ جینز جو ہمیں ذہین بناتی ہیں وہی جینز لمبی زندگی جینے میں بھی ہماری مدد کرتی ہے۔ نئے مطالعے میں لندن اسکول آف اکنامکس سے منسلک تحقیق کاروں نے ذہانت اور متوقع عمر کے درمیان تعلق کی جانچ پڑتال کی ہے۔ تحقیق دانوں نے نتائج میں بتایا کہ ذہانت اور لمبی عمر کے درمیان ہمیں جو تعلق ملا ہے وہ زیادہ ترجینز کی وجہ سے تھا۔ ماہرین کو جڑواں بچوں کے مطالعے کے تجزیہ سے پتا چلا کہ ذہین بچوں میں کم ہوشیار بچوں کی نسبت لمبی عمر جینے کا امکان تھا۔ محققین نے سویڈن، امریکہ اور ڈنمارک کے تین مختلف مطالعوں کا تجزیہ کیا ہے، جس میں مشابہ جڑواں بچوں اور غیر مشابہ جڑواں بچوں کے درمیان متوقع عمرکے فرق کو دیکھا ہے۔ ان جڑواں بچوں کے ہر جوڑے میں ایک بچے کا انتقال ہو گیا تھا۔ جبکہ محققین نے صرف ایک ہی جنس رکھنے والے جڑواں بچوں کو تجزیہ میں شامل کیا تھا۔ مشاہدے میں ماہرین نے جڑواں بچوں کی ذہانت کی سطح اور موت کی عمر کے ریکارڈ کو دیکھا۔ محققین کی ٹیم حاصل شدہ ڈیٹا کا تجزیہ کرتے ہوئے اس نتیجے پر پہنچی کہ جڑواں بچوں میں سے ہرجوڑے میں سے ایک کی عمر طویل تھی اور یہ اثر غیر مشابہ بچوں کے درمیان کہیں زیادہ نمایاں تھا۔ محققین نے تحقیق کے نتائج کو اعداد و شمار کی مدد سے مرتب کیا، جس سے یہ حیران کن نظریہ سامنے آیا ہے کہ ذہانت اور عمر کے درمیان جو تعلق ہے اس کی ذمہ دار 95 فیصد جینز تھی۔ معتبر بین الاقوامی جریدے ’’جرنل ایپی ڈیمیولوجی‘‘ میں مصنف روزالینڈ آرڈین نے لکھا کہ جڑواں بچوں کے درمیان ذہانت کا فرق تھا اور ان کی موت کی عمر بھی کافی مختلف تھی۔ محقق آرڈین نے کہا کہ نتائج سے یہ واضح نہیں ہو سکا کہ یہ جینیاتی تعلق ذہانت اور طویل عمر کے لیے کس طرح کام کرتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ممکن ہے کہ ’’جن لوگوں کے پاس وہ جینز ہوتی ہے،جو انھیں ذہین بناتی ہے ان کے پاس ایسی جینز بھی ہوتی ہے جو انھیں صحت مند رکھتی ہے، یا پھر ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ ذہانت اور عمر دونوں جینیاتی تبدیلیوں کے لیے حساس ہیں اور جن لوگوں کے پاس کم ناقص جین ہوتی ہے وہ لمبی زندگی جیتے ہیں۔‘‘ بقول پروفیسر آرڈین ذہانت اور عمر کے درمیان تعلق چھوٹا تھا لہٰذا آپ اپنے بچوں کے امتحان کے نتائج کو دیکھ ر ان کی عمر کا اندازا نہیں لگا سکتے ہیں۔ لندن اسکول آف اکنامکس اینڈ پولیٹیکل سائنس سے وابستہ اقتصادیات اور سیاسیات کی پروفیسر روزالینڈ آرڈین کہتی ہیں کہ ’’ دیکھا گیا ہے کہ جو بچے ذہانت کے امتحان میں زیادہ نمبر لیتے ہیں، ان میں لمبی عمر جینے کا امکان ہوتا ہے،اس کے علاوہ وہ لوگ جو تنظیمی ڈھانچوں کے اعلی عہدوں مثلا سینیئر سول ملازمین ہیں ان میں بھی طویل عمر کا رجحان ملتا ہے تاہم ان دونوں صورتوں میں ہم یہ نہیں جانتے ہیں کہ ایسا کیوں ہوتا ہے۔ لیکن ہمارے مطالعے میں ایسے شواہد ملے ہیں، جن سے پتا چلتا ہے کہ ذہانت اعلی عہدے پر کام کرنے کے لیے ایک اہم کردار ادا کرتی ہے، جب کہ اعلی عہدے اور لمبی عمر کے درمیان تعلق رتبے کا اثر نہیں ہے بلکہ یہ ڈی این اے کا نتیجہ ہے۔‘‘ انھوں نے کہا کہ اس مطالعے میں جینیاتی طور پر ایک جیسے جڑواں بچوں اور غیر مشابہ اوسطا نصف ’’ڈی این اے‘‘ کا اشتراک کرنے والے جڑواں بچوں کا موازنہ کیا گیا ہے اور نتائج نے جین کے اثرات کو ماحولیاتی عوامل مثلا گھر ،اسکول ،بچپن کی غذائیت وغیرہ سے نمایاں کیا ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *