منور حسن کا بیان ان کی ذاتی رائے تھی، جماعت اسلامی

munawarجماعت اسلامی کے سینیئر رہنما ڈاکٹر فرید پراچہ نے اتوار کو کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہلاک ہونے والے فوجی سپاہیوں کی حیثیت کے بارے میں منور حسن کا بیان ان کی ذاتی رائے تھی، اور یہ جماعت اسلامی کا پالیسی بیان نہیں تھا۔

انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی پیر کو منعقد ہونے والے اپنی شوریٰ کے اجلاس کے بعد فوج کے ردعمل پر جلد ہی اپنا باضابطہ بیان جاری کرے گی۔

جماعت اسلامی کے رہنما نے کہا کہ قومی مفاد کے مختلف معاملات پر بات کرنے کے لیے جماعت کی سپریم کونسل (شوریٰ) میں فیصلہ لیا جاتا ہے۔ جماعت اسلامی اس معاملے پر اس کے اجلاس میں بحث کے بعد ایک تفصیلی بیان جاری کرے گی۔“ انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی کے بانی مولانا مودودی اکثر فقہ سے متعلق معاملات پر اپنے بیانات میں ہمیشہ یہ واضح کردیا کرتے تھے کہ یہ ان کی ذاتی رائے ہے۔ انہوں نے کہا کہ ”ان حالات میں جماعت اسلامی کے امیر کو مولانا مودودی کی پیروی کرنی چاہئیے تھی۔“

فرید پراچہ نے کہا کہ جماعت اسلامی اہم معاملات اور قومی مفاد میں ہمیشہ مسلح افواج کی حمایت کرتی رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ جماعت فوج کے بارے میں ہتک آمیز کلمات ادا کرنے کے بارے میں سوچ بھی نہیں سکتی، مزید یہ کہ فوج نے جماعت اسلامی کے سربراہ کے بیان پر اپنا ردعمل انتہائی عجلت میں ظاہر کیا تھا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *