اقتصادی بحالی اور قومی تر قی کا مشن پورا کریں گے ،نواز شریف

?????????????????????????????????????????????????????????

وزیراعظم محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ اقتصادی بحالی اور قومی ترقی کا مشن مکمل کریں گے ،امریکا اقتصادی اصلاحات اور علاقائی امن کے حصول کیلئے کوششوں میں پاکستان کو غیر مشروط تعاون فراہم کریگا،پاکستان اور امریکا کے مابین تعلقات2برس پہلے کے مقابلے میں نئی بلندیوں پر پہنچ گئے ،صدر اوباما کی دعوت پر دورہ امریکا سے یہ تعلقات مزید مستحکم ہونگے۔ سرکاری میڈیا کو انٹرویو میں وزیراعظم نے کہا کہ ہم بغیر کسی شرط اور دباﺅ کے خطہ میں سکیورٹی اور معاشی اصلاحات کیلئے کوششوں کی یقین دہانی کراتے ہیں۔ پاکستان کے جوہری پروگرام اور مسئلہ کشمیر کے حوالے سے تمام قیاس آرائیاں غلط ثابت ہوئی ہیں۔ صدر اوباما کے ساتھ اپنی ملاقات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا پاکستان نے امریکا کو بھارتی مداخلت کے شواہد دیے اور پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی بھارتی کوششوں کے حوالہ سے اپنے تحفظات کا امریکی انتظامیہ کے سامنے موثر انداز میں اظہار کیا۔ وزیراعظم نواز شریف نے مزید کہا کہ امریکی منڈیوں تک بڑے پیمانے پر رسائی کے نتیجہ میں دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تجارت نئی بلندیوں پر پہنچے گی۔ انہوں نے کہا اس وقت پاک امریکا تعلقات کا سالانہ حجم 5 بلین ڈالر ہے اور ہم اسے دگنا کرنا چاہتے ہیں۔پاکستان میں سرمایہ کاروں کیلئے سازگار ماحول کی فراہمی کی کوششوں کے بارے میں وزیراعظم نے کہا کہ حکومت ملک میں سرمایہ کار دوست اور ون ونڈو آپریشن کی سہولت کیلئے قواعد و ضوابط میں تبدیلی کیلئے کام کر رہی ہے ، ملک میں توانائی اور دیگر شعبوں میں ٹیکس چھوٹ کی پہلے ہی پیشکش کی جاچکی ہے اور 2018 کے اختتام تک ملک سے لوڈ شیڈنگ کا مکمل خاتمہ ہوجائیگا جس سے ملک میں مزید غیرملکی سرمایہ کاری لانے میں مدد ملے گی۔ پاک چین اقتصادی راہداری کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ اس سے ملک میں عظیم انقلاب برپا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں کچھ لوگ ترقی سے خوش نہیں اور وہ ترقی کے عمل میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں۔ وزیراعظم نے اس اعتماد کا اظہار کیا کہ وہ اقتصادی بحالی اور قومی ترقی کے اپنے مشن کو مکمل کرینگے۔ انہوں نے امریکا میں پاکستانی برادری پر بھی زور دیا کہ وہ ملک کو خوشحال بنانے میں کردار اداکریں۔

اقتصادی بحالی اور قومی تر قی کا مشن پورا کریں گے ،نواز شریف” پر ایک تبصرہ

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *