مصطفٰی کانجو کی بریت: سپریم کورٹ کا ازخود نوٹس

zainچیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس انور ظہیر جمالی نے زین قتل کیس میں مصطفٰی کانجو کی بریت کا ازخود نوٹس لے لیا۔ جسٹس انور ظہیر جمالی نے مقدمے کا تمام ریکارڈ سربمہر لفافے میں بند کرکے پیش کرنے کا حکم دے دیا۔سابق وزیر مملکت صدیق کانجو کے بیٹے مصطفیٰ کانجو اور ان کے ساتھیوں پر الزام تھا کہ انہوں نے گاڑی کی ٹکر کے تنازع پر لاہور کے کیولری گراؤنڈ میں 16 سالہ طالب علم زین کو قتل کردیا۔مصطفیٰ کانجو اور ان کے چار ساتھیوں سعداللہ، صادق امین، اکرام اللہ اور محمد آصف کو گرفتار کرکے ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا گیا تھا۔ابتدائی طور پر متعدد گواہوں نے انہیں شناخت کرلیا تھا، مقتول زین کے ماموں کا کہنا تھا کہ انھیں مصطفٰی کانجو کے خاندان کی جانب سے فون کالز موصول ہو رہی ہیں جن میں ان سے مقدمہ واپس لینے کا مطالبہ کیا جارہا ہے، دوسری صورت میں انھیں سنگین نتائج کی دھمکیاں بھی دی گئیں۔تاہم بعد میں کیس کے تمام گواہوں نے پولیس کو دیئے گئے بیانات سے انحراف کرتے ہوئے ملزم کو پہچاننے سے انکار کردیا تھا۔جس کے بعد رواں ماہ 27 اکتوبر کو راولپنڈی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ملزم مصطفیٰ کانجو کو 4 ساتھیوں سمیت بری کردیا تھا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *