اسپیکر کا انتخاب اور چودھری پرویز الٰہی

majid siddiquiپیر کے دن اسپیکر کے عہدے کے لئے قومی اسیمبلی میں انتخاب ہونا ہے اور سننے میں آرہا ہے کہ پیپلز پارٹی، متحدہ اور ق لیگ نے اسپیکر کے لئے ہونے والے انتخاب میں غیر مشروط طور پر ن لیگ کے امیدوار ایاز صادق کی یہ کہتے ہوئے حمایت کردی ہے کہ وہ ایک غیر جانبدار شخص ہیں۔ چودھری پرویز الٰہی ، جو ن لیگ کی ماں بہن کرتے ہوئے تھکتے نہیں ہیں، اس وقت سردار ایاز صادق کو متفقہ امیدوار کے طور پر منتخب کروانے کے لئے دن رات ایک کررہے ہیں۔ وہ پیپلز پارٹی اور متحدہ کو تو اس بات پر آمادہ کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں اور اب پی ٹی آئی کوبھی اس بات پر راضی کرنے کے لئے سر توڑ کوشش کررہے ہیں۔ چودھری صاحب کی کاوشوں کے نتیجے میں پیپلز پارٹی اور متحدہ تو مان چکی ہیں، البتہ پی ٹی آئی کے لئے یہ بات ماننا سیاسی طور پر ممکن نہیں ، اس لئے لگتا یہی ہے کہ بلآخر مقابلہ ن لیگ، پی پی پی، متحدہ اور ق لیگ کے متفقہ امیدوار سردار ایاز صادق اور پی ٹی آئی کے شفقت محمود کے درمیان ہوگا۔ ظاہر ہے اس صورتحال میں نتیجہ جو نکلنا ہے ، سو ہم سب کو معلوم ہے۔
ن لیگ کے کٹر مخالف چودھری پرویز الٰہی نے ن لیگ کے امیدوار کے حق میں دلائل دیتے ہوئے یہ تک فرمادیا ہے کہ برطانیہ سمیت دنیا کے بیشتر ممالک میں اسپیکر اتفاق رائے سے منتخب ہوتا ہے۔ اس لئے انہوں نے شاہ محمود قریشی سے ملاقات کرتے ہوئے انہیں ایک بار پھر اپنی پارٹی قیادت سے بات کرنے کے لئے استدعا کی ہے۔ یہ چودھری پرویز الاھی، سردار ایاز صادق کو متفقہ جتوانے کے لئے گھر سے بے گھر کیوں ہوئے ہیں۔میرے خیال میں اس پر سب سے اچھا تبصرہ یا معلومات پنجاب، خاص طور پر لاھور کے صحافی حضرات شیئر کرسکتے ہیں۔ ہمارے سیاستدان کوئی بھی کام بلامقصد نہیں کرتے ، اس لئے اس بے انتہا محبت کی بھی کوئی نہ کوئی وجہ تو ہوگی۔
پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے درمیان( پی ٹی آئی کو چھوڑ کر)ایک غیر علانیہ اتحاد موجود ہے، جس کا عکس بار بار نظر آتا رہتا ہے۔ یہ تمام جماعتیں جمہوریت اور عوامی راج کے نام پر ایک دوسرے کو ہر قسم کی حمایت دینے اور مجموعی طور پراپنے طبقے کے حق حاکمیت قائم رکھنے کے لئے ہر وقت سرگرداں نظر آتی ہیں۔ وہ آپس میں ہر وقت الجھتی بھی رہتی ہیں، تاہم ان کا قائم کردہ اسٹیٹس کو جب چیلینج ہوتا ہے تو وہ وقت ضایع کئے بغیر بلاتفریق ایک ہوجاتی ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *