تیل کی قیمتوں میں کمی ۔۔۔۔ نقصان دہ یا فائدہ مند

images3SWNNN2D یقیناًآپ حیران ہوں گے کہ بھلا یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ تیل سستا ہونا نقصان دہ ہو ؟ بھئی بات یہ ہے کہ بلوم برگ جریدے کے تجزیہ نگار کے مطابق اس کے دونوں پہلو ہو سکتے ہیں ۔ جہاں تک نقصان کا تعلق ہے تو پہلی بات تو یہ کہ اس سے تیل کے استعمال میں بے پناہ اضافہ ہو جائے گا۔ یہ وسائل کے ضیاع کا باعث ہوگا کیومکہ مال مفت دل بے رحم کا کلیہ لاگو ہوگا۔ دوسرا نقصان سعودی عرب اور تیل پیدا کرنے والے ممالک کو ہوگا۔ سستے تیل کی وجہ سے ان کی معیشت کو بے پناہ دھچکا لگے گا اور ان ممالک سے وابستہ کروڑوں ملازمین کی تنخوہوں میں کمی ہو گی۔ اس سے عالمی سطح پر بے روزگاری میں اضافہ ہو گا۔ خود ان ممالک میں لوگوں کی قوت خرید میں کمی واقع ہوگی۔ اس کے برعکس بنک آف امریکا کے میرل لنچ کے مطابق یہ رجحان عالمی برادری کے لیے فائدہ مند ہو گا۔ خاص طور پر چین کی معیشت کو اس سے خاطر خواہ فائدہ ہو گا کیونکہ اس کا روباری حجم بہت زیادہ ہے۔ اعدادوشمار کے مطابق تقریباً تین ٹرلین ڈالر تیل پیداکرنے والے اداروں سے عالمی منڈی میں منتقل ہوں گے ۔میرل کے مطابق اتنی بڑی رقم کا شفٹ دنیا کی تاریخ میں پہلی دفعہ ہو رہا ہے ۔ ظاہر ہے اس سے کاروبار میں اضافہ ہو گا جو دنیا پر بہتر اثرات مرتب کرے گا۔ انھوں نے مثال دی کہ بڑی گاڑیوں کی پیداوار میں حیرت انگیز اضافہ ہو گا۔ صرف امریکہ میں اس میں 60فیصد اضافہ متوقع ہے۔ اس سے اندزہ لگایا جا سکتا ہے کہ عالمی سطح پر تیل کی قیمتوں میں کمی مجموعی طور پر انسانیت کے لیے کتنی فائدہ مند ہو گی۔ ایل اور تجزیے کے مطابق دولت کو عیاشیوں پر خرچ کرنے والے عربوں کو بھی معلوم ہو گا اس کی صحیح قدر کیا ہو تی ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *