موجودہ حالات میں ایران کے ساتھ ثالثی کی کوئی گنجائش نہیں، عادل الجبیر

سعودی وزیرخارجہ عادل الجبیر نےadul al jubair کہا ہے کہ ایران کے ساتھ تعلقات کی بحالی کے لیے کسی ملک کی ثالثی کی کوئی ضرورت نہیں ۔ تہران کو اچھی طرح معلوم ہے کہ دوسرے ملکوں کے ساتھ برادرانہ تعلقات کی بحالی کے کیا تقاضے ہیں اور اس باب میں اسے کیا کچھ کرنا ہے۔

اپنے ایک بیان میں سعودی وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ ایران نے ریاض کے حوالےسے معاندہ روش اپنا رکھی تھی جسے ہر صورت تبدیل ہونا چاہیے۔ اگرایران اپنی غیرذمہ دارانہ پالیسی تبدیل نہیں کرتا تو دو طرفہ تعلقات درست نہیں ہو سکتے ۔

عادل الجبیر نے کہا کہ موجودہ حالات میں ایران کے ساتھ ثالثی کی کوئی گنجائش نہیں۔ جب تک ایران پڑوسی ملکوں سے تعلقات بہتر بنانے کے لیے اپنی ذمہ داریاں ادا نہیں کرتا تب تک کسی تیسرے فریق کی طرف سے مفاہمتی مساعی کا کوئی فائدہ نہیں ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ تعلقات کی بحالی سے قبل ایران کو ہمارے اندرونی معاملات میں مداخلت اور عرب ممالک میں دخل اندازی کا سلسلہ بند کرتے ہوئے دہشت گردی اور فرقہ واریت میں ملوث تنظیموں کی مدد سے ہاتھ کھینچنا ہو گا۔

سعودی عرب کو ایران کی جانب سے عرب ممالک میں مداخلت اور دہشت گرد گروپوں کی پشت پناہی کی بھی شکایت رہی ہے۔ ایران اپنے مذموم مقاصد کی تکمیل کے لیے عرب ممالک کی تنظیموں کو استعمال کرتا رہا ہے جس پر سعودی عرب نے تہران کو نکیل ڈالنے کی ہمیشہ مثبت کوششیں کیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *