بولیں ۔۔۔منظور ہے؟؟؟

gul

ہم دونوں نے طے کیا کہ ہم پہلے لاہور کے امیر ترین علاقے سے آغاز کریں گے‘ صبح ٹھیک 10 بجے میں اور الطاف ڈیفنس پہنچ گئے اور نیشنل ہسپتال کی پارکنگ میں گاڑی لگا لی۔الطاف ایک دُکھی انسان ہے ‘ میرے ساتھ والے آفس میں ہوتاہے‘ کام کاج کوئی نہیں کرتا‘ محنت سے جان جاتی ہے لیکن بڑے یقین سے کہتا ہے کہ ’’مجھ پر کسی نے بندش کی ہوئی ہے‘‘۔ الطاف کو یقین ہے کہ اس پوری دنیا میں صرف وہی ایک دُکھی اور پریشان انسان ہے‘ باقی سب لوگ عیش کر رہے ہیں‘ وہ اپنے علاوہ ہر بندے کو حسرت بھری نگاہ سے دیکھتاہے اوراُنہیں دنیا کے خوش قسمت ترین انسان قرار دیتا ہے‘ میں اُس سے متفق نہیں تھا لہذا ہم نے ایک دلچسپ سروے کا پروگرام بنایا‘ ہم نے سوچا کہ لاہور کے مختلف علاقوں میں چلتے ہیں اور لوگوں سے پوچھیں گے کہ انہیں کوئی پریشانی یا دُکھ تو نہیں؟؟؟ہسپتال کی پارکنگ میں ابھی ہم آکر رکے ہی تھے کہ کالے رنگ کی ایک چمکدار سی گاڑی آکر رکی جس میں ایک خوبصورت نوجوان جینز پہنے بیٹھا ہوا تھا‘ الطاف نے جلدی سے مجھے کہنی ماری’’لو بھئی! دیکھو یہ کتنا مطمئن نظر آرہا ہے‘ گاڑی بھی ہے‘ کپڑے بھی اچھے پہنے ہوئے ہیں‘ شکل و صورت سے کھاتا پیتا بھی لگ رہا ہے‘ شرط لگا لو اِسے کوئی دُکھ نہیں ہوسکتا۔۔۔‘‘ہم دونوں بھاگ کر اس کے پاس پہنچے‘ الطاف نے جلدی سے پوچھا’’سنئے۔۔۔کیا آپ کو کوئی دُکھ ہے؟‘‘ یہ سنتے ہی نوجوان چونک کر رک گیا‘ کچھ دیر غور سے ہم دونوں کی طرف دیکھا‘ پھر اچانک اس کی آنکھوں میں آنسو بھر آئے‘ بے اختیار الطاف کا ہاتھ پکڑ کر بولا’’میرے دو سال کے بیٹے کا آج آپریشن ہے‘ دماغ میں رسولی ہے‘ اللہ سے دعا کیجئے گا۔۔۔‘‘ الطاف ایک دم بت بن گیا‘ میرے جسم سے گویا جان نکل گئی‘ ہم دونوں کھڑے کے کھڑے رہ گئے اور نوجوان آنکھیں صاف کرتا ہوا آگے چلا گیا۔۔۔تھوڑی دیر بعدہمارے اوسان بحال ہوئے تو ایک لینڈ کروزر ہمارے قریب آکر رک چکی تھی‘ اُس میں سے ایک ادھیڑ عمر شخص نیچے اترا جس کے ہونٹو ں پر ہلکی سی مسکراہٹ تھی اور کافی مہنگا سوٹ پہنا ہوا تھا۔الطاف اسے دیکھتے ہی جھوم اٹھا اور میرے کان میں سرگوشی کی’’یہی ہے۔۔۔‘‘۔ میں نے ادھیڑ عمر سے سلام لینے کے لیے ہاتھ آگے بڑھا دیا‘ اُس نے چونک کر میری طرف دیکھا‘ پھر مسکرا کر ہاتھ ملایا اور ہم دونوں کے سر پر ہاتھ پھیرا۔۔۔میں نے بڑی متانت سے پوچھا’’سر! آپ کو زحمت تو ہوگی لیکن ہم پوچھنا چاہتے ہیں کہ کیا آپ کو کوئی دُکھ ہے؟‘‘ اُس نے چونک کر میری طرف دیکھاا ور جواب دینے کی بجائے مزید مسکراتے ہوئے آگے بڑھ گیا۔۔۔میں نے بوکھلا کر پیچھے سے آواز دی۔۔۔’’سر بتا تو دیجئے کہ کیا آپ کو کوئی دُکھ ہے۔۔۔؟؟؟‘‘ وہ میری بات سنی ان سنی کرتے ہوئے ہسپتال کے گیٹ سے اندر داخل ہوگیا۔الطاف نے قہقہہ لگایا۔۔۔’’دیکھا ! یہ ہوتا ہے مطمئن اور مغرو ر انسان‘ جو بڑی سی گاڑی میں آتا ہے ‘ مسکراتاہے اور ہم جیسے دو ٹکے کے بندوں کی بات کا جواب دینا بھی گوارہ نہیں کرتا۔۔۔‘‘ اتنے میں دوسری طرف سے آواز آئی۔۔۔’’میرے صاحب ! مغرور نہیں ہیں‘‘۔ ہم دونوں بیک وقت مڑے‘ سامنے لینڈ کروزر کا ڈرائیور کھڑا تھا‘ کچھ دیر وہ ہمیں دیکھتا رہا پھر قریب آکر بولا’’میرے صاحب تو بہت اچھے ہیں‘ ہم سب ملازمین کا بہت خیال رکھتے ہیں‘ ٹائم پر تنخوا ہ دیتے ہیں اور کوئی ایمرجنسی ہو تو چھٹی بھی دے دیتے ہیں‘‘۔ الطاف نے طنزیہ لہجے میں کہا’’ظاہری بات ہے اتنی دولت ہوگی تو اچھائی تو خودبخود نظر آئے گی‘تمہارے صاحب صرف تم لوگوں کے ساتھ ہی اچھے ہوں گے‘ ہمیں تو انہوں نے اپنی دولت کے نشے میں جواب تک دینا گوارہ نہیں کیا۔۔۔‘‘ ڈرائیور بولا’’وہ کسی کو بھی جواب نہیں دیتے‘‘۔ الطاف جل بھن کر بولا’’توبہ ہے! خاموشی کے اتنے شوقین ہیں تو اپنی زبان ہی کٹوا دیں‘‘۔ ڈرائیور آہستہ سے بولا۔۔۔’’اُن کی زبان چار سال پہلے ہی ایک حادثے کے نتیجے میں کٹ چکی ہے۔۔۔‘‘ہمارے پیروں تلے زمین نکل گئی‘ الطاف نے خجالت سے منہ دوسری طرف کرلیا۔ہم نے سوچا کہ ہسپتال میں تو سبھی مریض اور دکھی لوگ ہی آئیں گے لہذ ا کسی ایسی جگہ چلتے ہیں جہاں مسکراتے چہرے آتے ہیں‘ ہم گاڑی میں بیٹھے اورایک فائیو سٹارہوٹل کے ڈائننگ ہال میں آگئے‘ یہاں ہر طرف زرق برق لباس پہنے ‘ خوشبو میں اٹے لوگ طمانیت کے ساتھ کھانا کھا رہے تھے اور خوش گپیاں کر رہے تھے‘ ہم نے ایک نوجوان جوڑے کو تاڑا جو ہنس ہنس کے ایک دوسرے سے باتیں کر رہا تھا‘ تھوڑی ہی دیر میں ہم اُن کی ٹیبل پر تھے اور اُن سے بھی وہی سوال پوچھ رہے تھے جو ہم نے باقیوں سے پوچھا تھا‘ ہمارا سوال سنتے ہی دونوں کے چہروں پر ایک رنگ آکر گذر گیا‘ نوجوان نے لڑکی کی طرف دیکھا اور لڑکی نے نظریں جھکا لیں۔الطاف نے بے چینی سے نوجوان سے پوچھا’’آپ کو بھلا کوئی دُکھ کیسے ہوسکتاہے؟‘‘ نوجوان نے ایک زخمی سی مسکراہٹ کے ساتھ الطاف کی طرف دیکھا اور شکایت آمیز لہجے میں بولا’’کیا شادی کے دس سال بعد بھی اولاد کا نہ ہونا کوئی دُکھ نہیں؟؟؟‘‘ الطاف جلدی سے پیچھے ہٹ گیا۔اُس روز ہم نے لاہور کی مختلف لوکیشنز پر امیر ‘ غریب‘ اور مڈل کلاس کے ایک سو کے قریب لوگوں سے یہ سوال پوچھا اور جوابات سن کر ہمارے ہوش اڑ جاتے رہے‘ کسی کو کینسر تھا‘ کسی کی ایک ٹانگ مصنوعی تھی‘ کسی کی گاڑی کی قسط جمع کرانے کی آخری تاریخ گذر چکی تھی‘ کسی کی شادی ناکام ہوگئی تھی‘ کسی کی بیٹی اغواء ہوچکی تھی‘ کسی پرجھوٹے مقدمے بنے ہوئے تھے‘ کسی کی نوکری چلی گئی تھی‘ کسی کا ویزہ ریجکٹ ہوچکا تھا‘ کسی کی ماں آخری سانسیں لے رہی تھی‘ کوئی اپنے ابنارمل بچے کے لیے پریشان تھا‘ کسی کا جگر جواب دے چکا تھا‘ کوئی ڈائلسس پہ زندہ تھا‘ کسی کے گردے ختم ہوچکے تھے‘ کسی کی اوپن ہارٹ سرجری طے ہوچکی تھی‘ کسی کے پلاٹ پر قبضہ ہوچکا تھا‘ کسی کا بجلی کا میٹر کٹنے والا تھا‘ کسی کا گیس کا میٹر کٹ چکا تھا‘ کسی پرچھ ماہ کا کرایہ چڑھا ہوا تھا‘ کسی کے ہاں دو دن سے فاقے چل رہے تھے‘ کسی کی بیٹیاں شادی کے انتظار میں بوڑھی ہوتی جارہی تھیں‘ کسی کے گھر میں اولاد کی وجہ سے بے سکونی تھی‘ کسی کے دل میں سوراخ تھا‘ کوئی قرضے کے بوجھ تلے دبا ہوا تھا‘ کوئی بیٹی کے جہیز کے لیے ہاتھ پاؤں مار رہا تھا‘ کسی کو تین ماہ سے تنخواہ نہیں ملی تھی‘ کسی کا سب کچھ اپنوں نے لوٹ لیا تھا‘ کسی کی تین تین بیٹیاں طلاق لے کر گھر واپس آبیٹھی تھیں‘ کسی کی آنکھیں بے نور ہوچکی تھیں اور کوئی بڑھاپے کی ٹھوکریں کھانے کے لیے اکیلا رہ گیا تھا۔۔۔اتنے سارے دُکھ سن کر ہمیں احساس ہوا کہ ہمارے دُکھ کتنے کم تر ہیں۔
ہم سب کسی نہ کسی دکھ کا شکار ہیں‘ ہم میں سے ہر کوئی دوسرے کو دیکھ کر یہی سوچتا ہے کہ کاش میں اِس جیساہوجاؤں‘ لیکن یقین کیجئے ایسا ہوجائے تو ہمارے ہوش اڑ جائیں‘ ہماری نظریں دوسرے کے صرف سُکھ دیکھ رہی ہوتی ہیں اور یہی سکھ ہم لیناچاہ رہے ہوتے ہیں‘ تجربہ کر کے دیکھ لیجئے‘ اپنی مرضی کے کسی بھی ایسے شخص کا تصور کیجئے جسے آپ کامیاب ترین او ر خوش قسمت ترین انسان سمجھتے ہیں اور خدا سے دعا کیجئے کہ مجھے بھی اس جیسا بنادے۔۔۔لیکن دعا کرتے وقت یاد رکھئے گا‘ قبول ہوگئی تودوسرے شخص کی زندگی کا پورا پیکج آپ کا مقدر ہو گا‘ اُس کا ہرسُکھ ‘ اُس کا ہردُکھ۔۔۔بولیں! منظور ہے؟؟؟

بولیں ۔۔۔منظور ہے؟؟؟” پر ایک تبصرہ

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *