Dunya Pakistan

ایک دن، دو جنازے

میں نے آج کے کالم کی پہلی دو سطریں ہی لکھی تھیں کہ برادرم اجمل شاہ دین کا میسج موصول ہوا۔”رؤف طاہر صاحب فوت ہو گئے ہیں۔“ یوں لگا جیسے یکدم آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا گیا ہو، میں نے باقاعدہ آنکھیں مل کر دوبارہ پیغام پڑھا مگر میرے آنکھیں ملنے سے بھلا پیغام کیسے بدل سکتا تھا۔میں نے فوراً اجمل کو فون ملایا، انہوں نے بدقت تمام اتنا بتایا کہ ابھی ڈیڑھ گھنٹہ پہلے ساڑھے دس بجے کے قریب رؤف صاحب آن لائن کلاس لے رہے تھے، کلاس ختم ہوئی تو ساتھ ہی اُن پر سکتہ سا طاری ہو گیا، فوراً ایمبولنس میں انہیں قریبی اسپتال لے جایا گیا، وہاں پہنچے تو پتا چلا کہ ہارٹ اٹیک سے موت تو پہلے ہی واقع ہو چکی ہے۔اِس کے بعد ہم دونوں خاموش ہو گئے۔ یوں لگا جیسے ہماری زبانیں گنگ ہو گئی ہوں۔ ہم دونوں کو ہی یقین نہیں آرہا تھا کہ ہم کیا بات کر رہے ہیں۔رؤف طاہر۔۔۔۔فوت ہی ہوگئے۔۔۔بے شک جانا تو سب کو ہے مگر رؤف طاہر یوں اچانک چلا جائے گا، ہمارے وہم و گمان میں بھی نہیں تھا۔ابھی چار دن پہلے تو میری اُن سے بات ہوئی تھی، آواز میں وہی طنطنہ تھا،وہی کڑک تھی۔ وہ فون ملا کر فی البدیہہ شعر سنانا اور ساتھ ہی قہقہہ لگانا۔رؤف طاہرکی زندگی ایک درویش کی زندگی تھی،قناعت، اخلاص اور دیانت کی زندگی۔ ایک سادہ سا مکان لاہور کی بستی میں بنایا تھا، وہاں ایک رات ڈاکو گھس آئے اور جو کچھ جمع پونجی تھی سمیٹ کر چلتے بنے۔ایک ہفتے کے اندر دوبارہ پھر اسی مکان میں ڈاکہ پڑا، اللہ جانے اِس کی کیا وجہ تھی، صفایا تو پہلے ہی ہو چکا تھا،اب بچا کچا سامان بھی گیا۔ اِن واقعات کا ایک دوست کو پتا چلا تو اُس نے اپنا ڈیبٹ کارڈ انہیں دے دیا کہ فی الحال آپ اپنی ضرورتیں پوری کریں باقی بعد میں دیکھ لیں گے۔ اس مرد درویش نے مسکرا کر کارڈ واپس کر دیا ”یہ میں نہیں رکھ سکتا۔“وہ مکان اب اُن کے لیے محفوظ نہیں رہا تھا سواسے فروخت کرکے نسبتاً نئی بستی میں ویسا ہی سادہ اور قدرے سستاسا مکان بنا لیا۔شومئی قسمت کہ ایک رات وہاں بھی ڈاکہ پڑ گیا۔ان کے گھر کے پیچھے ایک ویرانہ تھا، ڈاکو وہاں سے دیوار پھاند کر گھر میں داخل ہوئے، لوہے کی کھڑکی کاٹی اور سیدھا اُن کی خواب گاہ میں گھس گئے۔ گھر میں جو تھوڑا بہت سامان اور نقدی تھی وہ قبضے میں کی اور فرار ہو گئے۔رؤف طاہر نے اِس پر بھی اپنے رب سے کوئی شکوہ نہیں کیا،لبوں پر کوئی شکایت لائے بغیر صبر شکر کر کے بیٹھ گئے کہ اللہ کی یہی رضا ہوگی۔ایک درویش کی بھلا اور کیا نشانی ہوتی ہے

رؤف طاہر پاکستان کی چلتی پھرتی تاریخ تھے، وہ جب قومی معاملات پر گفتگو کرتے تو تاریخی حوالے دے کر مد مقابل کے چھکے چھڑا دیتے۔لاہور کی کوئی ادبی اور سیاسی محفل اُ ن کے بغیر مکمل نہ ہوتی۔ لوگ کسی کے مرنے کے بعد یہ بات رسماً کہتے ہیں کہ مرحوم کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا مگر رؤف طاہر کے بارے میں یہ بات رسمی نہیں حقیقت ہے۔ اب اِس شہرکی کوئی محفل ایسی نہیں ہوگی جس میں رؤف طاہر کو یاد نہیں کیا جائے گا۔رؤف طاہر ’ون مین آرمی‘تھے، کبھی کبھی تو یوں لگتا تھا جیسے جمہوریت اور آئین کی بالا دستی کا عَلَم اکیلے انہوں نے اٹھایا ہوا ہے۔ شہر میں کہیں بھی کوئی شخص سویلین بالادستی کے خلاف بات کرتا تو رؤف صاحب اسے آڑے ہاتھوں لیتے اور تابڑ توڑدلائل سے اسے چاروں شانے چِت کر دیتے۔ اپنے نظریات کے معاملے میں وہ اس قدر کٹر تھے کہ ذاتی تعلق کی بھی پرواہ نہیں کرتے تھے۔ دائیں بازو کے دانشوروں میں رؤف صاحب سے زیادہ خوشگوار شخصیت کے حامل اور مدلل گفتگو کرنے والے لوگ میرے خیال میں اب ایک ہاتھ کی انگلیوں پر ہی گنے جا سکتے ہیں۔دوستوں کی مجلس میں ہم اُن سے خاصی بے تکلفی برتتے اور بعض اوقات اُن سے ایسا مذاق بھی کر جاتے جو اپنے ہم عمر دوست سے ہی کیا جا سکتا ہے مگر رؤف صاحب شاذو نادر ہی کسی بات کا برا نہیں مناتے۔محفلوں میں سب سے بلند آہنگ قہقہہ رؤف طاہر کا ہی ہوتا۔فون کرتے تو کالم پر ایسا تخلیقی تبصرہ کرتے کہ بندہ عش عش کر اٹھتا۔رؤف طاہرنے بطور صحافی اِس ملک میں وہ راستہ چنا جو مشکل اور کٹھن تھا۔ ان کے پاس وہ آسان راستہ بھی تھا جس پر چلنے کے لیے انہیں فقط اپنے جمہوری نظریات سے دستبردار ہو نا تھا،پھر راوی نے اُن کے لیے چین ہی چین لکھنا تھا، پھر انہیں کسی کالج میں لیکچر دینے کی ضرورت نہیں پڑنی تھی، اُس صورت میں انہیں ٹاک شو بھی ملنا تھا اور منہ مانگے دام بھی، لیکن اس مرد حُر نے کبھی اپنے نظریات کا سودا کرنے کے بارے میں نہیں سوچا۔یہ بات کہنی آسان ہے مگر عمل بہت مشکل۔

مجھے انداز ہ ہے کہ میں بے ربط اور ٹوٹے پھوٹے جملے لکھ رہا ہوں اور اس کی وجہ یہ ہے کہ اپنے ہاتھوں سے رؤف طاہر کی قبر پر مٹی ڈالنے کے باوجود مجھے اب تک اُن کی موت کا یقین نہیں آرہا۔لیکن شہر سُونا سُونا لگ رہا ہے اِس لیے اب یقین کرنا ہی پڑے گا۔ انہیں لحد میں اتارا تو پتا چلا کہ قبر اُ ن کے قد کے حساب سے کچھ چھوٹی ہے سو انہیں قبر سے باہر نکال لیا گیا، قبر کشادہ کی گئی اور پھر تدفین ہوئی۔یو ں لگا جیسے زمین بھی رؤف طاہر کو لینے کے لیے تیار نہیں تھی۔ اک شخص سارے شہر کو ’واقعی‘ ویران کر گیا!
ابھی میں رؤف طاہر کی موت کا جھٹکا برداشت نہیں کر پایا تھا کہ مجھے ایک اور فون کال موصول ہوا۔اطلاع ملی کہ کراچی میں میرے مرحوم تایا جان ضیا الحق قاسمی کے بڑے بیٹے ظفیر پیرزادہ اچانک دل کا دورہ پڑنے سے جاں بحق ہو گئے ہیں۔ وہ اپنے دفتر سے واپس آ رہے تھے کہ گاڑی چلاتے ہوئے انہیں ہارٹ اٹیک ہوا، گاڑی فٹ پاتھ پر چڑھ گئی، نہ جانے کتنی دیر وہ اسی حالت میں گاڑ ی میں رہے، پھر ایک ایمبولنس پاس سے گذری تو اس میں انہیں اسپتال لے جایا گیا، وہاں پتا چلا کہ ان کی موت واقع ہو چکی ہے۔ ایک گھنٹے کے اندر اندر یہ دوسری موت کی خبر تھی جو مجھے ملی۔ظفیر بھائی کو ہم پیار سے ظفر کہتے تھے، قد چھ فٹ سے نکلتا ہوا، بدن چھریرا اور پرسنالٹی ایسی کہ کسی فلم کے ہیرو لگتے تھے۔مگر ہمارے اِس ہیرو کی تمام زندگی مشکل میں ہی گذری، ایک مرتبہ ایسا ایکسیڈنٹ ہوا کہ ٹانگ کی جراحی کروانا پڑی اور کئی مہینوں تک

اس کڑیل جوان کوگھر میں رہنا پڑا۔ پھر کچھ سال پہلے دل کی تکلیف شروع ہو گئی، ڈاکٹروں نے ذہنی تناؤ سے بچنے کا مشورہ دیا مگربد قسمتی سے یہ بات اُ ن کے اختیار میں نہیں تھی کہ اُن کا مقدر ہی کچھ عجیب تھا۔ سارے کزن رشتہ دار تو ہوتے ہیں مگر سارے رشتہ دار دوست نہیں ہوتے۔ ظفیر بھائی مجھ سے چند سال ہی بڑے تھے مگر دوست تھے۔اُن کا دماغ بہت زرخیز تھا،نت نئے آئیڈیاز اُن کے دماغ میں آتے اور وہ انہیں کاپی رائٹ کروا لیتے، کہتے تھے ”دیکھ لینا ایسے ہی ایک دن میرا کوئی آئیڈیا ہِٹ ہو جائے گا۔“کبھی کبھی مجھے فون کرکے بتاتے کہ فلاں موبائل کمپنی نے اُن کا آئیڈیا چرا لیا ہے اور ا ب وہ اُن پر مقدمہ دائر کرنے لگے ہیں۔اُ ن کا کوئی آئیڈیا تو کامیاب نہیں ہوا البتہ وہ جاتے جاتے ہمیں رلانے میں کامیاب ہو گئے۔’ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے۔‘

Exit mobile version