بیلاروس میں ’’باغی صحافی‘‘ کی گرفتاری

زمانہ طالب علمی سے ’’اب راج کرے گی خلقِ خدا‘‘اور ’’لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے‘‘ والے خواب دیکھے ہیں۔ ان کی بدولت گماں یہ لاحق رہا کہ کوئی آمر خواہ کتنا ہی طاقت ور کیوں نہ ہو اقتدار چھوڑ کر راہ فرار ڈھونڈنے کو مجبور ہوجاتا ہے اگر عوام اپنے گھروں سے نکل کر سڑکوں پرآجائیں ۔ کسی بھی ملک کے بڑے شہروں میں جمع ہوئے ہجوم کو ریاستی قوت کے بے دریغ استعمال کے ذریعے قابو میں لانا ناممکن ہے۔نہتے مظاہرین کے خلاف لاٹھیاں اور آنسو گیس بے بس نظر آئیں تو ریاستی اداروں کو بالآخر گولیاں برسانا ہوتی ہیں۔ان کی وجہ سے ہوئی ہلاکتیں ’’عالمی ضمیر‘‘ نامی کسی شے کو چراغ پا بنادیتی ہیں۔آمریت اس کے روبرو سرنگوں ہوجاتی ہے۔

ہمارے پہلے آمر فیلڈ مارشل ایوب خان کے خلاف 1968میں ایسی ہی تحریک کا آغاز ہوا تھا۔ ذوالفقار علی بھٹو کے خلاف 1977میں نوستاروں والی تحریک چلی۔ نظر بظاہر حالیہ تاریخ میں جنرل مشرف کے زوال کا حقیقی سبب افتخار چودھری کی 2007میں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے عہدے سے برطرفی کے خلاف چلی تحریک تھی۔

ہمارے کئی محققین اگرچہ اصرار کرتے ہیں کہ مذکورہ تحاریک عوام کی فطری اور برجستہ جدوجہد کی نمائندہ نہیں تھیں۔کوئی ا ٓمر کامل اختیارات کے ساتھ اقتدار پر تاحیات براجمان رہنے کی ضد میں مبتلا نظر آئے تو اس کے خلاف عوام کے دلوں میں اُبھرتے غصے سے حکمران اشرافیہ بطور گروہ پریشان ہوجاتی ہے۔اشرافیہ کے کائیاں نمائندے سازشی انداز میں آمر کے خلاف برپا ہوئی تحاریک کی سرپرستی کرتے ہیں۔وہ بے بس ہوکر مستعفی ہوجاتا ہے۔عوام کی بھڑاس اس کی فراغت سے پریشر ککر میں جمع ہوئی بھاپ کی مانند ہوا میں اڑ جاتی ہے اور یوں ریاستی نظام کو مزید استحکام میسر ہوجاتا ہے۔پھکڑپن کی اجازت ہو تو کہہ سکتا ہوں کہ ہر شے ’’آنے والی تھاں‘‘ پر واپس آجاتی ہے۔جنرل ضیاء کے دس برس اس سوچ کی حمایت میں بطور حوالہ پیش کئے جاسکتے ہیں۔مصر میں نام نہاد ’’عرب بہار‘‘ کا جو انجام ہوا اسے بھی ذہن میں رکھنا ضروری ہے۔

سرد جنگ کے اختتام کے بعد ’’نظام کہنہ‘‘ کو دوام فراہم کرنے کے لئے تاہم ’’عوام کی بھرپور حمایت سے‘‘ اقتدار میں آئے ’’دیدہ وروں‘‘ کی آمریت کا چلن شروع ہوا۔ ترکی کے ’’سلطان اردوان‘‘ اور بھارت کا ’’نریندر مودی‘‘ اس کی بھرپور علامتیں ہیں۔ ٹرمپ نے بھی ان کی نقالی کی کوشش کی۔صدیوں کی محنت سے مستحکم ہوئی جمہوری روایات اور اداروں کے ہاتھوں مگر شکست سے دو چار ہوا۔ بطور امریکی صدر چار سالہ اقتدار کی ایک اورٹرم بھی نہ حاصل کرپایا۔

پاکستان جیسے ممالک میں لیکن جمہوری روایات اور ادارے امریکہ کی طرح مستحکم اور توانا نہیں۔ ’’عالمی ضمیر‘‘ نامی شے بھی اب ریاستی جبر کے بے دریغ استعمال کی بابت سرد جنگ کے دنوں کی طرح پریشان نہیں ہوتا۔ برما میں اس برس کے فروری میں وہاں کی فوج نے ایک بار پھر مارشل لاء لگادیا۔ اس کے خلاف جاری تحریک بہت جاندار ہے۔نوجوان لڑکوںاور خواتین کی کثیر تعداد سینکڑوں ہلاکتوں کے باوجود سرنگوں ہونے کو تیار نہیں ہورہی۔برما میں ’’جمہوریت کی بحالی‘‘ کے امکانات مگر دور دور تک نظر نہیں آرہے۔ ریاستی ڈھانچے نے مزاحمت کو کار بے سود میں بدل ڈالا ہے۔"

ابھی تک جو لکھا ہے اسے پڑھ کر میرے کئی ’’انقلابی‘‘ قارئین نے غالباََ فرض کرلیا ہوگا کہ میں ’’اب یہاں کوئی نہیں۔کوئی نہیں آئے گا‘‘ جیسا مایوس کن پیغام دینا چاہ رہا ہوں۔عمر کے آخری حصے میں توانائی اور لگن سے محروم ہوا یہ طے کربیٹھا ہوں کہ ’’تبدیلی‘‘کی خواہش رائیگاں کا سفر ہے۔ سرجھکائے اپنے کام سے کام رکھو۔’’چپ کر دڑوٹ جا‘‘ والی غلامانہ شکست خوردگی۔

فرض کیا میں یہ پیغام دے بھی رہاہوں تو یہ احمقانہ عمل ہوگا۔ ’’تبدیلی‘‘ یا بدترین آمریت کے خلاف بغاوت کی خواہش انسانی جبلت میں شامل ہے اور ہر دور میں اس کے لئے تڑپنے والے اظہار اور مزاحمت کی نت نئی صورتیں ایجاد کرلیتے ہیں۔دور حاضر میں سوشل میڈیا اس تناظر میں اہم ترین کردار ادا کررہا ہے۔

کئی عرب ممالک میں ٹویٹر کو ’’عرب بہار‘‘ کا کلیدی ہتھیار مانا گیا تھا۔اسی باعث آمرانہ روش کی عادی بے تحاشہ ریاستوں نے اپنے ہاں کے مین سٹریم میڈیا کو مکمل طورپر قابو میں لانے کے بعد ٹویٹر اور فیس بک جیسی ایپس پر پابندی لگادی۔واٹس ایپ پربھی کڑی نگاہ رکھی جاتی ہے۔امریکہ میں لیکن 6جنوری 2021والا واقعہ ہوا تو آزادیٔ اظہار کی سب سے بڑی چمپئن ہوئی دُنیا کی واحد سپر طاقت نے بھی ان ایپس چلانے والی کمپنیوں کو مجبور کیا کہ وہ نفرت بھڑکاتے پیغامات کے فروغ کوروکنے کے راستے ڈھونڈیں۔ ٹرمپ کو ابھی تک ٹویٹر اور فیس بک استعمال کرنے کی سہولت نہیں لوٹائی گئی ہے۔ٹویٹر اور فیس بک والے نفرت بھڑکاتے پیغامات کو ان کے خلاف موصول ہوئی شکایتوں کے بعد ہٹادیتے ہیں۔حکومتیں اگر کچھ پیغامات کے ذریعے اپنا ’’بیانیہ‘‘ فروغ دیتی نظر آئیں تو وضاحت کردی جاتی ہے کہ ایسے پیغامات فلاں ریاست کے سرکاری یا زیر پرست ادارے کی جانب سے پوسٹ ہوئے ہیں۔

انٹرنیٹ کی ایک Appمگر کسی بھی حکومت کے قابو میں نہیں آرہی۔ Telegramاس کا نام ہے۔ایک دیوانے روسی نوجوان نے اسے ایجاد کیا تھا۔ آج بھی وہ فقط 36برس کا ہے۔اس ایپ پر پیغام دینے والے کا سراغ لگانا ریاستی اداروں کے لئے تقریباََ ناممکن ہے۔ جس ملک میں بھی انٹرنیٹ موجود ہے وہاں محض موبائل فون کے ذریعے ٹیلی گرام کو اپنا پیغام پہنچانے کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔یہ ایپ ان دنوں ایران کے نوجوانوں میں بھی بہت مقبول ہے۔اسے چلانے والے جھکنے کو تیار نہیں ہورہے۔

مذکورہ ایپ کا بھرپور استعمال ہمیں بیلا روس نامی ملک میں بھی نظر آیا۔روس کے ہمسائے میں یہ ایک کروڑ کی آبادی والا چھوٹا سا ملک ہے۔ کبھی سوویت یونین کا حصہ تھا۔ سوویت یونین کا زوال ہوا تو وہاں Alexander Lukashenkoجیسا دیدہ ور نمودار ہوگیا۔ وہ 26برس سے مسلسل اقتدار میں ہے۔ اپنے اقتدار کو طول دینے کے لئے اس نے گزشتہ برس کے اگست میں ایک اور صدارتی ’’انتخاب‘‘ کا انعقاد کیا اور ’’بھاری اکثریت‘‘ سے جیت گیا۔عوام دھاندلی کا شورمچاتے سڑکوں پر نکل آئے۔ دیدہ ور مگر ٹس سے مس نہیں ہوا ہے۔ کئی مہینوں تک برپا رہی تحریک اب تھکن کے ہاتھوں دم توڑ رہی ہے۔دیدہ ور کے خلاف جدوجہد مگر جاری ہے۔

اس جدوجہد کو زندہ رکھنے کے لئے جلاوطن ہوئے چند صحافیوں نے Nexta-Liveکے نام سے ایک ٹی وی چینل ٹیلی گرام نامی ایپ پر بنارکھا ہے۔وہ ’’دیدہ ور‘‘ کی چیرہ دستیوں کو مسلسل بے نقاب کررہا ہے۔اس کے چہیتے وزیروں کی کرپشن کہانیاں اجاگر کرتا رہتا ہے۔اس ٹی وی چینل کا روح رواں صحافی مگر اتوار کے دن یونان کے ایک طیارے میں بیٹھ کر بیلا روس کے ہمسایہ ملک لیتھووینا جارہا تھا۔ طیارہ جب مذکورہ ملک کی جانب پرواز کررہا تھا تو اس کے پائلٹ کو بیلا روس کی حکومت نے ’’اطلاع‘‘ دی کہ طیارے میں بم کی موجودگی کے اشارے ملے ہیں۔طیارے اور اس میں سوار مسافروں کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے لہٰذا پائلٹ اپنا طیارہ فوری طورپر بیلا روس کی جانب موڑدے اور وہاں لینڈ کرے۔ پائلٹ ابھی کوئی فیصلہ بھی نہیں کرپایا تھا کہ بیلا روس کے جنگی طیارے میزائلوں سے لیس ہوئے اسے لینڈنگ کی راہ دکھانا شروع ہوگئے۔

طیارہ جب بیلا روس میں لینڈ ہوگیا تو اس میں سوار باغی صحافی کو اتارلیا گیا۔ اس کے ہمراہ سفر کرنے والے چند مسافر بھی جو یقینا بیلا روس کے سیکورٹی اداروں کے نمائندے تھے وہیں اترگئے۔ چند گھنٹے گزرنے کے بعد طیارے کو اپنی منزل کی جانب پرواز کرنے کی اجازت مل گئی۔

بم کی جھوٹی اطلاع کے ساتھ ایک مسافر طیارے کوجنگی طیاروں کی نگرانی میں بیلا روس اترنے کو مجبور کرنے والے واقعہ نے یورپی ممالک میں ہاہاکار مچادی ہے۔اس کے ذریعے ’’باغی صحافی‘‘ کی گرفتاری نے ’’انسانی حقوق‘‘ کی بابت بھی بے شمار سوالات اٹھادئیے ہیں۔اجتماعی ردعمل تیار کرنے کے لئے پیر کے روز یورپی یونین کا ہنگامی اجلاس ہوگا۔

بیلا روس کے ’’دیدہ ور‘‘ نے تاہم انتہائی ڈھٹائی سے فی الوقت اپنا مقصد حاصل کرلیا ہے۔باغی صحافی کو عبرت کا نشان بناکر وہ اپنے خلاف جاری مزاحمت کو مزید بے بس ولاچار ثابت کرے گا۔’’عالمی ضمیر‘‘نامی شے اس ضمن میں جو رویہ اختیار کرے گی وہ کئی اعتبار سے تاریخی نظیر اور سنگ میل ثابت ہوگا۔عوامی تحاریک کے متمنی دلوں کو اس واقعہ کے انجام اور مضمرات پر کڑی نگاہ رکھنا ہوگی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: