غزل

یوں بھی اچھا لگا ہے کلکتہ
ہند کا قاہرہ ہے کلکتہ

دور بیٹھی ہوں مصر میں لیکن
دل مرا دیکھتا ہے کلکتہ

بڑھ کے لفظوں نے خود قلم چوما
میں نے جب جب لکھا ہے کلکتہ

جیسے ہوتی ہے پھول میں خوشبو
دل میں ایسے بسا ہے کلکتہ

شہر ہے یہ ادب نوازوں کا
سب کا دل کھینچتا ہے کلکتہ

مرزا غالب کو پڑھ کے دیکھو تو
شاعری بن گیا ہے کلکتہ

یاد رکھا ولا کو لوگوں نے
کس قدر با وفا ہے کلکتہ

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *