غزل

کبھی کہیں پر یاد بھی اس کی تھکتی ہے

لاکھ مچلتا ہے دل سانس بھی تھمتی ہے

چاند نہیں نکلا تو تم بھی بوجھل ہو

یعنی چاندنی سے ہی شکل نکھرتی ہے

کوئی طالبِ دید نہیں ہے لیکن وہ

اسی تواتر سے ہر روز سنورتی ہے

دیکھ کے اکثر اس کو غیر کی بانہوں میں

اسے خبر کیا مجھ پر کیسی گزرتی ہے

تجھ کو عشق فہیم نہیں لیکن اب بھی

ایک حسینہ ہے جو تجھ پر مرتی ہے

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published.