غزل

آیا نہیں ہے صبر یہ دل بیقرار ہے

اس عید پر بھی تیرا فقط انتظار ہے

بیٹھا ہوں آس ملنے کی لے کر پر وہ نہیں

کیسے کہوں وہ شخص مرا غم گسار ہے

اب صرف مانگتا ہوں دعا دید کے لئے

بس اب مرا سہارا وہ پروردگار ہے

اب بھی دھڑک رہا ہے یہ دل نام پر ترے

اس دل پہ یعنی اب بھی ترا اختیار ہے

اس بار ساتھ عید منائیں گے ہم فہیم

اس بار بھی اسی پہ مجھے اعتبار ہے