غزل

خود سے مجھ کو نہ ایسے مٹا دیجئے

پیار کا کچھ تو میرے صلہ دیجئے

مانتا ہوں کہ میں ان کے قابل نہیں 

پھر بھی ایسے نہ مجھ کو سزا دیجئے

دل سے میں نے بنایا ہے دل کا یہ گھر

آیئے اور اس کو سجا دیجئے

ہے رقیبوں کی محفل مگر ایک بار

موڑیئے مت نظر، اک صدا دیجئیے

گنگناتی تھیں شب بھر جسے چھت پہ تم

وہ غزل اب ہمیں بھی سنا دیجئے

ناسمجھ ہی سہی آپ کا ہے فہیم

ہاتھ اب دوستی کا بڑھا دیجیے