غزل

اپنے سینے میں ہی خنجر کو اتارا ہم نے

آستینوں میں چھپا سانپ جو مارا ہم نے

وہ لکیروں پہ یقیں کر کے پریشاں ہی رہا 

بگڑی تقدیر کو محنت سے سنوارا ہم نے

جب مرے ساتھ نہ تھا کوئی تو اُس وقت میں بھی 

اپنے سائے کو تسلسل سے پکارا ہم نے

سخت جانی بھی رہی در پہ رہی مشکل بھی

آسمانوں کے تلے وقت گزارا ہم نے

کچھ تو آوارگی باقی ہی رہی پھر بھی فہیم

اس کے کہنے پہ بھلے خود کو سدھارا ہم نے