غزل

ٹوٹ کر خواب جب سب بکھر جائیں گے

جیتے جی اس گھڑی ہم بھی مر جائیں گے

نا امیدی، اداسی، اذیت، گھٹن 

دیکھنا ایک دن یہ گزر جائیں گے

راستوں کا بھروسہ نہیں اب کوئی

منزلوں کے بنا یہ کدھر جائیں گے

زخم جتنے لگائے زمانہ مجھے 

وہ نظر ڈال دے زخم بھر جائیں گے

سی رکھا ہے لبوں کو تو کیا شیر ہیں 

تیری چیخوں سے ہم کیسے ڈر جائیں گے

عشق سمجھے نہیں ہیں ابھی تک فہیم

سیکھ جائیں گے تو پھول دھر جائیں گے