غزل

میری تنہائی ڈسے ہے مجھے ناگن کی طرح

بھیڑ میں رہتا ہوں لیکن کسی الجھن کی طرح

کھل کے رونے بھی نہیں دیتا زمانہ مجھ کو

آنکھ نم رہتی ہے  میری مرے دامن کی طرح

میری آہوں کی صدا کوئی نہیں سنتا ہے

ایک سایہ ہوں جو ویران ہے چلمن کی طرح

کان میں گونجے ہے شہنائی شب و روز مرے 

جیسے سنسار سجا ہو کسی دلہن کی طرح 

جوڑتا جاتا ہوں حیران وجود اپنا فہیم

ٹکڑوں ٹکڑوں میں بٹا ہوں کسی کترن کی طرح