غزل

جب بلاتے ہو یوں بہانے سے

ڈرتے کیوں ہو قریب آنے سے

گزرا ہر پل مرا تھا تجھ میں ہی 

یاد آیا مگر دِلانے سے

جس کو ٹھکرا دیا جہاں کے لئے

اب نہ آئے گا وہ بلانے سے

جب انہیں ہی خیال میرا نہیں 

شکوہ کیوں کر کروں زمانے سے

دل کی اتنی مجھے خبر ہے فہیم

لُٹ گیا تیرے مسکرانے سے

error: