غزل

ناداں   ہے   پروانہ   دھوکہ   کھائے   گا

دل کے ہاتھوں عشق میں جل جائے گا

 زعم   بھی   ہوگا   فنا   دریا  ترا

تو سمندر سے جہاں مل جائے گا

خواب میرا خواب بن کر رہ گیا 

دوست کوئ کام میرے آئے گا

جانتا ہوں جب پڑھوں گا میں کتاب

ہر ورق باتیں تری دہرائے گا 

باہوں میں بھرتا ہوں تجھ کو اس لئے

میرا دشمن اس طرح جل جائے گا

میں نصاب عشق پڑھتا ہوں فہیم

یہ یقیں ہے ، تجھ کو دل پا جائے گا

error: