غزل

"پروفیسرڈاکٹر محمد کامران"

روز  قرآن  پڑھا  کر  کہ یہ  دن  کٹ جائیں

ذکر  اذکار  کیا   کر  کہ یہ   دن  کٹ  جائیں

کتنے  عرصے  سے   مقیّد   ہوئی   ساری  دنیا

اب  تو دنیا  کو رہا کر کہ یہ  دن  کٹ  جائیں

غار والوں  کی طرح  ہم  نہیں  پھر بھی  مولا

نیند کچھ ایسی عطا  کر کہ یہ دن  کٹ  جائیں

میرے مولا مری  آنکھوں میں محبت بھر دے

اور  پھر  اتنی ضیا  کر کہ یہ  دن  کٹ  جائیں

میرے  مولا  یہ  وبا  ہے  کہ  سزا  ہے  کوئی

تو  ہی اب  جود و سخا کر کہ یہ دن کٹ جائیں

لوگ اب دیر و حرم جاتے ہوئے  ڈرتے  ہیں

کوئی  تدبیرِ شفا  کر  کہ  یہ   دن  کٹ  جائیں

error: