فوجی عدالتوں سے سزا پانوں والوں کی بریت کے خلاف اپیلیں چیف جسٹس کو بھیج دی گئیں

اسلام آباد: فوجی عدالتوں کے ذریعہ سزا سنائے جانے والے متعدد مجرموں کو بری کرنے کے پشاور ہائی کورٹ (پی ایچ سی) کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ نے چیف جسٹس گلزار احمد کو اپیلیں بھجواتے ہوئے لارجر بینچ کے قیام کی درخواست کردی۔

 رپورٹ کے مطابق جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں دو ججوں کے بینچ نے پیر کو چیف جسٹس کے پاس معاملہ بھیجتے ہوئے کہا کہ اس طرح کی اپیلوں کو 3 رکنی بینچ کی جانب سے سنا جانا چاہیے۔

وزارت دفاع کی جانب سے پی ایچ سی کے فیصلے کے خلاف عدالت میں 70 سے زائد اپیلیں کی گئیں۔

خیال رہے کہ پشاور ہائی کورٹ کی جانب سے نومبر 2018 کو یہ فیصلہ سنایا گیا تھا کہ فوجی عدالتوں کی طرف سے دہشت گردی کے الزامات میں پائے جانے والے سزا غلط اور غیر قانونی خواہش پر مبنی ہے۔

قبل ازیں عدالت عظمیٰ نے جیل سپرنٹنڈنٹ کو متعدد کیسز میں سزائے موت سمیت متعدد سزا پانے والے ملزمان کو بری کرنے سے روکتے ہوئے حکم امتناعی جاری کیے تھے۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل (اے اے جی) ساجد الیاس بھٹی نے وزارت دفاع کی نمائندگی کی جبکہ متعدد مجرموں کی جانب سے محمد عارف اور لئیق احمد سواتی پیش ہوئے۔

حکومت نے عدالت عظمیٰ میں موقف اپنایا کہ پشاور ہائی کورٹ نے دہشت گردی جیسے جرائم میں ملوث ملزمان کے حقائق کا درست جائزہ نہیں لیا تھا۔

دوسری جانب وکیل دفاع استدلال کیا کہ عدالت عظمیٰ نے پی ایچ سی کے حکم پر کارروائی سے روک دیا ہے حالانکہ ایک اعلی عدالت کے ذریعہ بری ہونے والوں کو کبھی بھی روکا نہیں جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ملزمان ہائی کورٹ کے ذریعہ بری ہونے کے بعد بھی پچھلے 18 ماہ سے سلاخوں کے پیچھے ہیں۔

نومبر 2018 میں چیف جسٹس وقار احمد سیٹھ اور جسٹس لال جان خٹک پر مشتمل دو ججوں کے پی ایچ سی بینچ نے 'قانون اور حقائق میں بدنظمی' کی بنیاد پر ملزمان کی سزاؤں کو ختم کردیا تھا۔

ہائیکورٹ نے وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو تمام مجرموں اور نظربند افراد کو رہا کرنے کا بھی حکم دیا تھا اور مزید کہا تھا کہ ان کی غیر معینہ مدت نظربندی بشمول انٹیلیجنس ایجنسیوں کی تحویل میں رکھے جانے کو 'سزا یاب ہونے کے مقصد سے کسی طور پر بھی سراہا نہیں گیا تھا'۔

error: