چین کے شمال مشرقی صنعتی علاقوں میں بجلی کی کمی کی وجوہات کیا ہیں؟

چین میں بجلی کی پیداوار میں زبردست کمی واقع ہوئی ہے جس سے دسیوں ہزار گھر اور کاروبار متاثر ہوئے ہیں۔

چین میں بجلی کی فراہمی متاثر ہونا کوئی غیر معمولی بات نہیں ہے لیکن رواں برس کچھ عوامل نے مل کر ملک میں بجلی کی پیداوار کو بری طرح متاثر کیا ہے۔

چین کا شمال مشرقی حصہ جو ملک کا صنعتی مرکز تصور کیا جاتا ہے، وہاں موسم سرما کے آغاز سے ہی بجلی کی فراہمی میں تعطل شدت اختیار کرتا جا رہا ہے۔ چین میں بجلی کی کمی ایک ایسا مسئلہ ہے جس کے پورے دنیا کے لیے اثرات ہو سکتے ہیں۔

چین کو توانائی کے بحران نے کیوں متاثر کیا ہے؟

یہ پہلی بار نہیں ہے کہ چین میں بجلی کی پیداوار بجلی کی طلب سے کم ہو۔ سردیوں میں بجلی کی طلب میں اضافے کے ساتھ بجلی کی فراہمی کا مسئلہ اور شدت اختیار کر جاتا ہے۔

لیکن رواں برس کئی عوامل نے مل کر بجلی کے بحران کو شدید کر دیا ہے۔

اب دنیا کی معیشتیں کووڈ کی وبا سے باہر آ رہی ہے، چینی مصنوعات کی طلب میں اضافہ ہوا ہے اور کارخانے اس طلب کو پورا کرنے کی سرتوڑ کوشش کر رہے ہیں جس کے لیے انھیں اضافی توانائی کی ضرورت ہے۔

ماحولیاتی آلودگی پر قابو پانے کی غرض سے حکومت نے کچھ ایسے قوانین کا اطلاق کیا ہے جس سے کوئلے سے بجلی کی پیداوار میں کمی واقع ہوئی ہے۔ چین میں بجلی کی پیداوار کا نصف سے زیادہ کوئلے سے چلنے والے بجلی گھروں سے آتا ہے۔

بجلی کی طلب میں اضافے کے ساتھ ہی کوئلے کی قیمتوں میں بھی اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

چین میں حکومت بجلی کی قیمتوں کو کنٹرول کرتی ہے جس کی وجہ سے کوئلے سے چلنے والے پاور پلانٹس کے مالکان نے اپنے پلانٹس کو گھاٹے میں چلانے کے بجائے بجلی کی پیداوار میں کمی کر دی ہے۔

بجلی کی کمی سے کون متاثر ہو رہا ہے؟

گھروں سے چلنے والے کاروبار بجلی کی فراہمی میں کمی سے متاثر ہوئے۔ حکومت نے کئی صوبوں میں لوڈ شیڈنگ بھی شروع کر رکھی ہے۔

A coal-burning power plant can be seen behind a factory in China"s Inner Mongolia Autonomous Region
،تصویر کا کیپشنچین میں بجلی کی پیدوار کا نصف سے زیادہ حصہ کوئلے سے چلنے والے بجلی گھروں میں پیدا ہوتا ہے

سرکاری اخبار گلوبل ٹائمز نے لکھا ہے کہ ملک کے شمالی مشرقی چار صوبے، گوانگڈانگ ،ہیلانگ ییانگ، جیلن اور لیوننگ میں بجلی کی فراہمی متاثر ہوئی ہے۔ ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ ملک کے کئی دوسرے علاقوں میں بھی بجلی کی فراہمی میں تعطل پیدا ہو رہا ہے۔

صنعتوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ یا تو وہ توانائی کا استعمال کم کریں یا پھر اپنے کام کے دنوں میں کمی کریں۔

سٹیل، ایلومینیم، سیمنٹ اور کھاد کی صنعتیں جن میں بجلی کی کھپت زیادہ ہوتی ہے، وہ بجلی کی کمی کی وجہ سے بری طرح متاثر ہوئی ہیں۔

اس کے چینی معیشت پر کیا اثرات ہو سکتے ہیں؟

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ستمبر 2021 میں چین میں فیکٹریوں کی مصروفیت فروری 2020 کے بعد سے اپنی کم ترین سطح پر ریکارڈ کی گئی ہے۔

صنعتوں کو توانائی کی فراہمی میں مسائل کی وجہ سے عالمی سرمایہ کاروں نے چین کی ترقی کے حوالے سے اپنے اندازوں میں تبدیلی کرنی شروع کر دی ہے۔

گولڈمین ساچے نے چین کی سالانہ شرحِ ترقی کے اپنے تخمینے کو 8.2 فیصد سے گھٹا کر 7.8 فیصد کر دیا ہے۔

چین میں توانائی کی فراہمی میں مسائل کی وجہ سے عالمی سطح پر اختتام سال کے موقع پر شاپنگ بھی متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

کورونا کی وبا کے بعد سے دنیا کی معیشتیں دوبارہ کھل رہی ہیں اور اشیا کی طلب میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

توانائی کے بحران پر قابو پانے کے لیے کیا کیا جا رہا ہے؟

چین کے معاشی منصوبہ بندی کے ادارے نیشنل ڈیویلپمنٹ اینڈ ریفارمز کمیشن (این ڈی آر سی) نے ملک کے شمال مشرقی حصے میں رواں موسم سرما میں بجلی کی پیداوار میں کمی کے مسئلے کے حل کو اپنی ترجیحات میں شامل کیا ہے۔

بجلی کی پیداوار کو بڑھانے کے لیے این ڈی آر سی تمام بجلی گھروں کو کوئلے کی فراہمی کو یقینی بنانے کے ساتھ بجلی کے استعمال کو کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

چین کی الیکٹریسٹی کونسل نے کہا ہے کہ کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے کمپنیاں ہر قیمت پر کوئلے کی خریداری کر رہی ہیں تاکہ سردیوں میں بجلی کی فراہمی کو یقینی بنایا جا سکے۔

چین

البتہ کوئلے کا حصول اتنا آسان نہیں ہے۔

روس کی ساری توجہ اپنے یورپی گاہکوں پر ہے جبکہ انڈونیشیا میں بارشوں کی وجہ سے کوئلے کی پیدوار میں کمی واقع ہوئی ہے جبکہ منگولیا کوئلے کو ٹرانسپورٹ کرنے کے مسائل سے دوچار ہے۔

کیا دنیا میں توانائی کی فراہمی کے مسائل کا آپس میں کوئی تعلق ہے؟

چین میں بجلی کی فراہمی میں تعطل، برطانیہ کے پیٹرول سٹیشن خشک، یورپ میں توانائی کی بڑھتی ہوئی قیمتیں، خام تیل، گیس، اور کوئلے کی قیمتوں میں اضافے کو اگر اکٹھا کر کے دیکھیں تو یہ خیال آتا ہے کہ دنیا توانائی کے بحران میں پھنس چکی ہے۔

لیکن یہ سب اتنا سادہ نہیں ہے اور ہر ملک میں توانائی کی فراہمی میں تعطل کی اپنی ہی وجوہات ہیں۔

مثال کے طور برطانیہ میں پیٹرول سٹیشنوں میں پیٹرول اس وجہ سے ختم ہو گیا کہ لوگوں نے پیٹرول کی کمی کے ڈر سے گاڑیوں کے ٹینک بھروا لیے۔

اسی طرح یورپ میں انرجی کے بلوں میں اضافے کی مقامی وجوہات ہیں جن میں گیس کا ذخیرہ کم ہونا، ونڈ ملز اور شمسی توانائی کے فارمز میں توانائی کی کم پیداوار ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: