ہنیا عامر، عاصم اظہر: ہنیا کے ساتھ انسٹاگرام لائیو کے دوران جنسی ہراس کا واقعہ اور سوشل میڈیا صارفین کی منقسم رائے

ہم سب اپنی زندگیوں میں یہ دیکھ چکے ہیں کہ سوشل میڈیا کے ذریعے کیسے ایک شخص راتوں رات دنیا بھر کی شہرت حاصل کر سکتا ہے، مگر کیسے ایک پل میں یہاں ٹرولنگ (مذاق اڑانے پر مبنی پیغامات) سے کسی کی زندگی برباد ہو سکتی ہے۔

کوئی چاہے کتنی بڑی سلیبرٹی کیوں نہ ہو، ہوتا تو وہ انسان ہی ہے جس کی زندگی میں آپسی تعلقات کی بنا پر اُتار چڑھاؤ آتے رہتے ہیں اور وہ انٹرنیٹ کی دنیا کو ایک حد تک ہی نظر انداز کر سکتا ہے۔

پاکستانی اداکارہ ہنیا عامر اور گلوکار عاصم اظہر ایک دوسرے کا نام لیے بغیر ایک دوسرے کے خلاف تنقیدی پیغامات جاری کر رہے ہیں اور اپنے اپنے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ذریعے اپنا موقف واضح کر رہے ہیں۔

ہنیا اور عاصم کے فینز یہ فیصلہ کر چکے ہیں کہ اس لڑائی میں وہ کس کا ساتھ دیں گے مگر شوبز کی ان دونوں شخصیات کے بیانات سے معلوم ہوتا ہے کہ انھیں آن لائن بولیئنگ کا سامنا ہے جس نے ان کی ذہنی صحت کو متاثر کیا ہے۔

ہنیا عاصم

عاصم نے لکھا ہے کہ ’گذشتہ ڈیڑھ سال سے ہر بات کا اشارہ میری طرف ہوتا تھا۔ لوگ ہر جگہ میرے بارے میں بات کرکے مجھے مسلسل بُلی (تنگ) کر رہے تھے۔‘

جبکہ ہنیا کے مطابق وہ ’خواتین کے خلاف نفرت انگیز پیغامات اور سائبر بلیئنگ کے خلاف آواز اٹھا رہی ہیں۔ اس سے لوگوں کی زندگیاں برباد ہو سکتی ہیں اور انھیں خطرے کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔۔۔ میری شکایت انٹرنیٹ پر ہراسانی اور بلیئنگ کے خلاف ہے۔‘

یہ مسئلہ عاصم بمقابلہ ہنیا نہیں ہے

سوشل میڈیا پر ایک طرف تو صارفین کی اکثریت اس معاملے پر اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے عاصم یا ہنیا میں سے کسی ایک کی حمایت کر رہی ہے۔

مگر دوسری طرف کچھ صارفین ایسے بھی ہیں جو بغیر کسی تعصب اصل مسئلے کی نشاندہی کرنا چاہتے ہیں۔

جیسے سعد نامی صارف کا موقف ہے کہ دو انسانوں کے بیچ تعلقات ختم ہونے کے بعد انھیں انفرادی سطح پر اپنے سابقہ ساتھی کو جلد از جلد بھولنے کی کوشش کرنی چاہیے تاکہ وہ سبق سیکھ کر اپنی آئندہ زندگی بہتر انداز میں گزار سکیں۔

emanashar1

سعد نے لکھا ’سابقہ ساتھی پر جملے کسنا، ان کا مذاق اڑانا بے مقصد ہے۔ آگے بڑھیں، بدلہ نہ لیں اور غصے یا غم کا اظہار نہ کریں۔ خود کے لیے پُرامن انداز زندگی کا انتخاب کریں!‘

مہربان نامی صارف نے ایک ٹویٹ میں لکھا ہے کہ ’لوگ اپنے سابقہ پارٹنر کے خلاف بات کیسے کر سکتے ہیں؟ آپ دونوں ایک طویل عرصے تک محبت میں مبتلا رہے، کم از کم اسی کا احترام کریں اور اپنی زندگیوں میں آگے بڑھیں۔‘

ایمان نے لکھا ہے کہ ’یہ سارا مسئلہ ہنیا عامر بمقابلہ عاصم اظہر نہیں ہے کیونکہ درحقیقت یہ سائبر بولیئنگ اور ہراسانی سے متعلق ہے۔‘

Noobiy12

خیال رہے کہ ماضی میں ماہرہ خان، علی ظفر، مہوش حیات اور میشا شفیع سمیت پاکستان میں شوبز کی بڑی شخصیات آن لائن بولیئنگ کے خلاف بات کر چکی ہیں۔

اکثر سلیبرٹیز سمجھتے ہیں کہ انھیں سوشل میڈیا پر بعض صارفین کی جانب نفرت انگیز تبصروں کا نشانہ بنایا جاتا ہے جس سے ان کے لیے مسائل پیدا ہوتے ہیں۔

فیس بُک کے کلوزڈ گروپس میں بھی اس حوالے سے بحث جاری ہے۔ ادھر ایک صارف کا کہنا تھا کہ ’آن لائن بولیئنگ کے خاتمے پر بات کرنے کے بجائے یہ نئی لڑائی منظر عام پر آ گئی ہے۔ مجھے معلوم نہیں کہ ہم کب کچھ سیکھیں گے۔‘

ہانیہ کی دو ویڈیوز کا معاملہ اور دوہرے معیار‘ کی شکایت: ’عورت پیاروں سے محبت کا اظہار کرے تو غلط، مرد تصویر پر مشت زنی کرے تو وائرل‘

پاکستانی اداکارہ ہنیا عامر نے گذشتہ روز معاشرے کے ’دوہرے معیار‘ پر تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’عورتوں سے نفرت کرنے والی دنیا میں۔۔۔ رائے کا احترام کرنے کا کوئی رواج نہیں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’جہاں ایک عورت کی تحقیر کرنے والا مرد تو قابلِ تعریف ہے لیکن اگر عورت وہی کرے تو اس سے نفرت کی جاتی ہے۔ جہاں اپنے پیاروں سے محبت کرنے اور ان سے پیار سے بات کرنے والی عورت تو غلط ہے لیکن انٹرنیٹ پر عورت کی تصویر کے سامنے مشت زنی کرنے والے مرد کی ویڈیو کو وائرل بنا دیا جاتا ہے۔‘

ہنیا
،تصویر کا کیپشنویڈیو میں اداکارہ انتہائی غمگین حالت میں اپنی بہن کے ساتھ باتیں کرتے ہوئے مسلسل اپنے آنسو پونچھتی نظر آئیں

یاد رہے گذشتہ جمعے کو ہنیا کی ایک ویڈیو سامنے آئی جس میں وہ اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر لائیو تھیں اور مداحوں سے گپ شپ لگا رہی تھیں۔ مبینہ طور پر اسی لائیو سیشن کے دوران کسی مداح نے ان کی تصویر کے سامنے مشت زنی کی۔

یہ سب اتنا ناقابلِ یقین تھا کہ دیکھتے ہی دیکھتے ہنیا کے چہرے کے تاثرات یکدم بدل گئے اور انھیں نے لائیو سیشن بند کر دیا۔

اس کے فوراً بعد کسی نے اس لائیو سیشن کی ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر پوسٹ کر دی جو پچھلے دو دنوں سے وائرل ہے۔ تاہم تاحال اس ویڈیو کی تصدیق نہیں کی جا سکی اور کچھ صارفین کا ماننا ہے کہ یہ ویڈیو فیک اور ایڈیٹڈ ہے۔

تاہم یہ صرف اسی ویڈیو کا معاملہ نہیں ہے، بلکہ اس معاملے میں ایک اور ویڈیو بھی شامل ہے۔ ہنیا کی ایک اور ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہے جس میں وہ ڈائریکٹر وجاہت رؤف کے بیٹوں عاشر وجاہت اور نائل وجاہت کے ساتھ گلوکار حسن رحیم کے گانے ’تیری آرزو‘ گا رہی ہیں۔

یاد رہے کہ ہنیا اکثر اپنی پوسٹس میں ڈائریکٹر وجاہت کے بیٹوں اور ان کی اہلیہ کو ’فیملی‘ کا حصہ قرار دیتی ہیں اور مذکورہ ویڈیو کے ساتھ بھی انھوں نے کہا تھا ’اپنے بھائی کو ایسے سنبھالا جاتا ہے کہ جب وہ 101 بخار میں تپ رہا ہو۔‘

جہاں بیشتر صارفین لائیو سیشن میں ہنیا عامر کو جنسی ہراسانی کا نشانہ بنانے والے رویے کی مذمت کر رہے ہیں وہیں کئی صارفین وجاہت رؤف کے بیٹوں کے ساتھ بنائی گئی ویڈیو کی بنیاد پر ہنیا پر ’بے حیائی اور فحاشی پھیلانے‘ کا الزام عائد کرتے ہنیا کو تنقید کا نشانہ بناتے نظر آئے۔

’ہم کیسے مایوس لوگ ہیں؟ اس بیچاری کی ہنسی ایک سیکنڈ میں غائب ہو گئی‘

Instagram\haniaheheofficial

کچھ صارفین پاکستانی معاشرے کے اس دوہرے معیار پر بحث کر رہے ہیں جہاں وجاہت رؤف کے بیٹوں کو گلے لگانے والی ویڈیو کی بنا پر ہنیا پر تنقید تو جائز ہے لیکن کوئی ان کے ساتھ ہونے والی ہراسانی پر بات نہیں کر رہا۔

اسی حوالے سے خالد نامی صارف نے لکھا ’حیا اور اصولوں کی وجہ سے کوئی اس بارے میں بات نہیں کر رہا ہے۔ اور چند دن قبل یہی قوم ملالہ یوسفزئی کو لیکچر دے رہی تھی کہ انھیں کیا کرنا اور کیا نہیں کرنا چاہے۔‘

ہدا اسماعیل نے ہنیا کی دونوں ویڈیو پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ ’ہنیا کو مرضی کے مطابق اپنی زندگی گزارنے کا اختیار حاصل ہے۔ لیکن ان کے ساتھ جو ہوا اس پر کوئی بات کیوں نہیں کر رہا؟ کیا اتنے مداحوں کے سامنے ایک لڑکی کو ہراساں کرنا صیحح ہے؟‘

صدیقہ نے تبصرہ کیا: افسوس ہے اس قوم پر۔ ہانیہ عامر کے لائیو سیشن میں جو ہوا وہ ان سب خواتین کے لیے ایک ریڈ سگنل ہے جو مداحوں کو جوائن کرنے دیتی ہیں۔ آپ کو کسی کی تحقیر کرنے کا کوئی کا حق نہیں ہے چاہے وہ عوامی شخصیت ہی کیوں نہ ہوں۔ یہ آپ کی اخلاقیات اور اقدار کو ظاہر کرتا ہے۔‘

tsukinag4s

دانش حسن نے لکھا ’ہنیا کے ساتھ جو ہوا وہ انتہائی قابلِ مذمت ہے اور اوپر سے لوگ ہنیا کو موردِ الزام ٹھراتے ہوئے ہنس رہے ہیں؟‘

شیخ نامی صارف نے تبصرہ کیا ’ہم کیسے مایوس لوگ ہیں؟ اس بیچاری کی ہنسی ایک سیکنڈ میں غائب ہو گئی اور اس نے لائیو بند کر دیا۔۔ میرے پاس کوئی الفاظ نہیں اور اب تو ان لوگوں کی ہدایت کے لیے دعا کرنے کا بھی دل نہیں کرتا۔‘

کچھ صارفین کا کہنا ہے کہ ہنیا کو لائیو سیشن کے دوران ان کی تصویر پر اپنی ہوس نکالنے والے شخص کو ڈھونڈ کر اس پر مقدمہ درج کروانا چاہیے۔

کئی صارفین سوشل میڈیا ٹرولنگ کے ذہنی اثرات پر بھی بات کرتے نظر آئے۔ کئی صارفین کا کہنا تھا کہ آپ کا مذاق اور ٹرولنگ کسی کی جان بھی لے سکتی ہے لہٰذا انٹرنیٹ پر ذمہ داری کا مظاہرہ کریں۔

ملائکہ نامی صارف نے اس حوالے سے ایک تھریڈ پوسٹ کیا جس میں انھوں نے ہنیا کو ہراساں کرنے کی مذمت کرنے کے ساتھ ساتھ ان کا مذاق اڑانے اور ٹرول کر کے انھیں ذہنی اذیت دینے والوں پر شدید تنقید کی۔

انھوں نے لکھا ’آخر ہنیا کی کیا غلطی تھی؟ اس معاشرے میں لڑکی ہونا ایک گالی ہے۔ ہنیا جس ذہنی اذیت سے گزر رہی ہے میں اس کا تصور بھی نہیں کر سکتی۔ ایک لڑکی کی حیثیت سے ان کے ساتھ جو ہوا وہ بدترین مثال ہے۔‘

’ہم ہمیشہ یہی کرتے ہیں اور پھر ایسے ظاہر کرتے ہیں جیسے ہم نے کچھ نہیں کیا۔ ایک معاشرے کی حیثیت سے ہم ناکام ہو گئے ہیں۔ ہم کسی شخص کو اتنی ذہنی اذیت دیتے ہیں کہ وہ خودکشی کر لے اور پھر ہم ایسا ظاہر کرتے ہیں جیسے کچھ ہوا ہی نہیں۔‘

ہنیا

ہنیا عامر سوشل میڈیا پر اکثر اپنی ذاتی زندگی شئیر کرتی رہتی ہیں اور کسی نہ کسی بنا پر زیرِ بحث رہتی ہیں۔

اسی جانب اشارہ کرتے ہوئے ثانیہ گلزار نامی صارف نے تبصرہ کیا: مسئلہ تب بنتا ہے جب آپ سب کچھ شئیر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ آپ اپنی زندگی جتنی زیادہ شئیر کرنے کی کوشش کریں گی اتنا ہی تنقید کا نشانہ بنیں گی لہذا لوگوں سے ہمدردی طلب کرنے کے بجائے زندگی میں کچھ اصولوں اور نظم و ضبط پر عمل کرنے کی کوشش کریں۔

یسری نامی صارف بھی ایسے ہی خیالات رکھتی ہیں۔ انھوں نے لکھا: آپ اپنی جگہ صحیح ہیں۔ لیکن کوئی چیز سوشل میڈیا پر ڈالے بغیر بھی آپ اپنے پیاروں کا خیال رکھ سکتے ہیں۔۔ ہر چیز سوشل میڈیا پر ڈالنا ضروری نہیں ہوتا۔

کئی صارفین کا کہنا ہے کہ ہنیا اکثر اپنے دوستوں کے ساتھ لطف اندوز ہوتے ہوئے ’فنی ویڈیوز‘ پوسٹ کرتی ہیں لیکن تنقید کرنے والے انھیں نیچا دکھانے اور ان کی خوشی برباد کرنے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے۔

Instagram\haniaheheofficial

یاد رہے کہ اگست 2018 میں بھی ہنیا اپنے مداحوں کی جانب سے جنسی ہراسانی کی شکایت کر چکی ہیں۔ اداکارہ کا کہنا تھا کہ مشہور شخصیت ہونے کا یہ مطلب نہیں کہ ہم عوامی ملکیت ہیں اور مداحوں کے بھیس میں آکر مرد ہمیں ہراساں کر سکتے ہیں۔

اداکارہ کا کہنا تھا کہ ایسی حرکت کرنے والوں کو کس طرح مداح کہا جا سکتا ہے جو ہماری محبت کے جواب میں ہمیں جنسی ہراس کا نشانہ بنا کر ہمیں شرمندہ کرنے، تکلیف دینے اور ذہنی پریشانی کا باعث بنتے ہیں۔

ہنیا عامر سوشل میڈیا کا استعمال کیوں کرتی ہیں؟

ایک روز قبل ہنیا نے اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر ایک پوسٹ کے ذریعے بتایا تھا کہ وہ سوشل میڈیا کا استعمال کیوں کرتی ہیں۔ اداکارہ کا کہنا تھا کہ ’میں یہاں سوشل میڈیا پر اپنی زندگی کی چھوٹی چھوٹی باتیں شیئر کرتی ہیں جو کچھ لوگوں کو پسند آتی ہیں جبکہ کچھ صارفین سوچتے ہیں کہ مجھے ایسا نہیں کرنا چاہیے۔‘

اداکارہ کا کہنا تھا کہ وہ سوشل میڈیا پر اپنی ذاتی زندگی اس لیے شیئر کرتی ہیں تاکہ ان کا اپنے مداحوں سے رابطہ برقرار رہے۔

ہنیا نے لکھا کہ میں یہاں مسکراہٹیں بکھیرنے کے لیے موجود ہوں، مجھے ایسی لڑکی کے طور پر یاد رکھیں جس نے اپنی معنی خیز گفتگو سے آپ کے دلوں کو چھو لیا اور جو مہربان، رحم دل اور محبت کرنے والی ہے۔

’مجھے ایسی لڑکی کے طور پر یاد رکھیں جس نے اپنی زندگی میں آنے والے چیلنجوں سے قطع نظر ہر لمحے سے لطف اندوز ہونے کی کوشش کی۔‘

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: