یوم خواتین کے موقع پر ایک نظم

صدیوں سے چل رہا ہے یہ کاروانِ نسواں
لکھ دی ہے نقشِ پا نے ہر داستانِ نسواں

اونچائیوں پہ پرچم ماضی میں بھی رہا ہے
دنیا میں آج بھی ہے اونچا نشانِ نسواں

دھرتی پہ بھی چلے تو ہر گام امتحاں ہے
اونچی اڑان میں بھی ہے امتحانِ نسواں

میداں ہے زندگی کا اپنے بغیر سونا
آباد اپنے دم سے ہے یہ جہانِ نسواں

صحرا ئوں میں بھی جائے بسنے کے واسطے گر
بن جاتا ہے بیاباں اک گلستانِ نسواں

ممتا کا ایک بادل ہے دھوپ سے بچاتا
آنچل کو ماں کے کہئے ہاں سائبانِ نسواں

ہم نے بدل دئے ہیں معنی ولا غزل کے
اشعار بن گئے ہیں اب تو زبانِ نسواں