وزراء سخت بیانات نہ دیں، زرداری کا وزیراعظم کو مشورہ

zardariوزیراعظم نواز شریف اور سابق صدر آصف علی زرداری کے درمیان ملاقات ہوئی ہے جس میں دونوں سیاسی رہنماؤں نے موجودہ ملکی صورت حال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔
پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین اور سابق صدر آصف زرداری، قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ، سینیٹ میں قائد حزب اختلاف اعتزاز احسن، سابق وزیر داخلہ رحمان ملک اور سینیٹر رضا ربانی کے ہمراہ خصوصی طیارے کے ذریعے کراچی سے لاہور پہنچے جہاں سے وہ بذریعہ ہیلی کاپٹر کے ذریعے رائے ونڈ میں جاتی عمرہ پہنچے، جہاں ان کا استقبال وزیراعظم نوازشریف نے خود کیا۔اس موقع پر وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف، حمزہ شہباز،  خواجہ آصف، عبدالقادر بلوچ  اور وزیر اطلاعات پرویز رشید بھی موجود تھے۔ سابق صدر آصف علی زرداری اور وزیر اعظم نواز شریف کے درمیان ون آن ون ملاقات ہوئی جس میں ملک کی مجموعی صورت حال اور اسلام آباد میں دھرنوں کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔ ون آن ون ملاقات کے بعد سابق صدر نے وزیر اعظم کی جانب سے دیئے گئے ظہرانے میں شرکت کی کس کے بعد دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات کا دوسرا دور شروع ہوا ہے جس میں پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کے دیگر رہنما بھی شریک ہیں۔
ملاقات کے دوران وزیراعطم نواز شریف کا کہنا تھا کہ آئین اور پارلیمنٹ کی بالادستی سب سے زیادہ مقدم ہے، مسلم لیگ(ن)جمہوری اداروں کااستحکام چاہتی ہے۔ ہم نے دیگر سیاسی جماعتوں کے مینڈیٹ کو تسلیم کیا تو پھر ہمارا مینڈیٹ بھی تسلیم کیا جائے۔ ملک کو کسی صورت عدم استحکام کا شکار نہیں ہونے دیں گے، وہ جو بھی فیصلہ کریں گے ملک اور خطے کے مفاد کو مدنظر رکھ کر کریں گے۔ وزیر اعظم نواز شریف سے گفتگو کے دوران آصف زرداری نے کہا کہ عوام اور سیاسی جماعتوں نے جمہوریت کیلیے بہت قربانیاں دی ہیں، پیپلز پارٹی جمہوری اداروں کے استحکام پر یقین رکھتی ہے ، اسلام آباد میں دھرنا دینے والوں کےآئینی مطالبات پرضرور بات ہونی چاہئیے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *