وائٹ واش کی جانب غیر متزلزل پیش قدمی، پاکستان انگلینڈ سے چوتھا ون ڈے بھی ہارگیا

لیڈز -انگلینڈ نے پاکستان کے خلاف ایک روزہ سیریز کے چوتھے میچ میں 4 وکٹوں سے فتح کے ساتھ مسلسل چوتھی کامیابی اپنے نام کرتے ہوئے سیریز میں 0-4 کی برتری حاصل کرلی۔

لیڈز میں کھیلے گئے میچ میں پاکستان نے پہلے کھیلتے ہوئے 247 رنز بنائے تھے جس کے تعاقب میں انگلینڈ کی جانب سے گزشتہ میچ میں 171 رنز کی شاندار اننگز کھیلنے والے الیکس ہیلز اور جیسن روئے نے بیٹنگ کا آغاز کیا لیکن ٹیم میں واپسی کرنے والے محمد عرفان نے جیسن روئے کو 15 رنز پر آؤٹ کیا انھوں نے 14 رنزبنائے تھے۔ محمد عرفان نے الیکس ہیلز کو وکٹوں کے پیچھے سرفرازاحمد کے ہاتھوں آؤٹ کرکے پاکستان کو دوسری کامیابی دلادی، ہیلز نے 8 رنز بنائے تھے اور اس وقت انگلینڈ کا اسکور 40 رنز تھا۔ جوروٹ 30 رنز بنانے کے بعد محمد حسن کا شکار بنے ان کا کیچ محمدعرفان نے تھام لیا جبکہ کپتان مورگن کو عمرگل نے خوبصورت گیند کرکے سلپ پر کھڑے شرجیل سے کیچ آؤٹ کرادیا جس کے بعد عماد وسیم سمیت دیگر باؤلرز وکٹیں حاصل کرنے کی کافی تگ دو کی لیکن اسٹوکس اور بیئراسٹو نے اس کو ناکام بناتے ہوئے 103 رنز کی شراکت قائم کی۔عرفان نے روئے اور ہیلز کو ابتدامیں آؤٹ کردیاتھا—فوٹو:اے ایف پی

اسٹوکس نے 69 رنز بنا کر عماد وسیم کی گیند پر باؤنڈری حاصل کرنے کی کوشش میں کیچ آؤٹ ہوئے لیکن بیئراسٹو نے معین علی کے ساتھ اپنی بیٹنگ جاری رکھتے ہوئے ایک اور شراکت قائم کی جو 50 رنز پر مشتمل تھی تاہم225 کے اسکور پر وہ 61 رنز بنانے کے بعد رن آؤٹ ہوگئے۔ انگلینڈ نے نے 48 اوورز کے اختتام پر6 وکٹوں کے نقصان پر 252 رنز بنا کر مقررہ ہدف عبور کر لیا اور سیریز میں 0-4 کی واضح برتری حاصل کرلی۔ معین علی 45 اورڈیوڈ ویلی 4 رنز بنا کر ناقابل شکست رہے۔ پاکستان کی جانب سے محمد عرفان نے 2، عمرگل، حسن علی اور عماد وسیم نے ایک، ایک وکٹ حاصل کی۔

قبل ازیں پاکستان نے انگلینڈ کو سیریز کے چوتھے میچ میں جیت کے لیے 248رنز کا ہدف دے دیا، اظہرعلی نے سب زیادہ 80 اور عماد وسیم نے آؤٹ ہوئے بغیر 57رنز بنائے۔ لیڈز میں کھیلے گئے میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے خود بیٹنگ کا فیصلہ کیا تو پہلی وکٹ 24 رنز پر گری جب شرجیل خان 16 رنز بنا کر کرس جارڈن کی گیند پر آؤٹ ہوئے۔ سمیع اسلم اپنے تیسرے میچ میں ایک دفعہ پھر بڑی اننگز کھیلنے میں ناکام رہے اور 24 رنز بناکر پویلین لوٹ گئے تاہم کپتان اظہرعلی نے بابراعظم کے ساتھ 49 رنز کی شراکت قائم کی اور اسکور کو 110 تک لے کر گئے مگر بابر اعظم نے معین علی کی ایک آسان گیند پر غیرذمہ دارانہ شاٹ کھیلا اور 12 رنز جوڑ کر چلتے بنے۔ سرفرازاحمد نے ابتدائی دومیچوں میں بہترین بلے بازی کا مظاہر کیا لیکن تیسرے اور چوتھے میچ میں اپنی فارم کو جاری رکھنے میں ناکام ہوئے اور 12 رنز بنا کر اس وقت آؤٹ ہوئے جب پاکستان کا اسکور 136 رنز تھا۔

شعیب ملک کی جگہ شامل کئے گئے بلےباز محمد رضوان بھی غیرذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہوئے آؤٹ ہوئے انھوں نے بھی 12 رنز بنائے تھے۔ کپتان اظہرعلی نے ذمہ دارانہ بلے بازی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ٹیم کے اسکور کو 169 رنز تک پہنچایا مگر نازک موقع پر ان کی ہمت بھی جواب دے گئی اور اونچے شاٹ کی کوشش میں باؤنڈری پر کھڑے ڈیوڈ ویلی کا کیچ بن گئے۔ اظہر نے 5 چوکوں اور دوچھکوں کی مدد سے 80 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے، محمد نواز آؤٹ ہونے والے ساتویں بلے باز تھے جو 13 نز بناسکے۔اظہرعلی نے دوچھکوں کی مدد سے نصف سنچری مکمل کی—فوٹو: رائٹرز

عماد وسیم نے شاندار کھیل کا مظاہرہ کرتے ہوئے پاکستان کی پوزیشن قدرے بہتر بنائی اور سیریز میں اپنی دوسری اپنی نصف سنچری بھی مکمل کی۔ عماد وسیم اور حسن علی نے آٹھویں وکٹ کی شراکت میں 56 رنز کا اضافہ کیا اور حسن 9 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔ پاکستان نے مقررہ اورز میں 8 وکٹوں کے نقصان پر 247 رنز بنا کر ا نگلینڈ کی مضبوط ٹیم کو ایک آسان ہدف دے دیا۔ عماد وسیم 57 اور عمرگل 6 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔عماد وسیم نے آؤٹ ہوئے بغیر 57 رنز بنائے—فوٹو: اے پی

انگلینڈ کی جانب سے عادل رشید نے 3، معین علی اور کرس جارڈن نے 2،2 وکٹیں حاصل کیں۔ سیریز کے چوتھے میچ کے لیے پاکستان ٹیم میں چار تبدیلیاں کی گئی تھیں, گزشتہ میچ میں ناقص باؤلنگ کرنے والے وہاب ریاض کو باہر بٹھا کر محمدعرفان کو جگہ دی گئی، وہاب ریاض نے تیسرے میچ 110 دے کر پاکستان کی جانب سے سب سے زیادہ رنز دینے کا ریکارڈ بنایا تھا۔

محمدعامر نے تیسرے میچ میں باؤلنگ میں کوئی کمال دکھانے میں کامیاب تو نہیں ہوئے تاہم 58 رنز کی بلے بازی کے ذریعے ٹیم کو تاریخ کی بدترین شکست سے بچالیا تھا تاہم اس میچ میں ان کو آرام دیا گیا۔ عمرگل کی چوتھے میچ میں پھر واپسی ہوئی جبکہ محمد رضوان کو سیریز میں پہلی دفعہ موقع دیا گیا اور شعیب ملک ناقص کارکردگی کی بنیاد پر ٹیم سے باہر ہوگئے جبکہ عماد وسیم بھی فٹ ہوکر حتمی ٹیم میں شامل ہوئے۔

انگلینڈ نے ابتدائی تین میچوں میں کامیابی حاصل کرکے سیریز کو پہلے اپنے نام کیا تھا۔ میزبان ٹیم نے پاکستان کے خلاف تیسرے میچ میں تاریخ کا سب سے بڑاہدف دیتے ہوئے 3 وکٹوں کے نقصان پر 444 رنز بنائے تھے جس کے جواب میں پاکستان کی پوری ٹیم 275 رنز بنا کر آؤٹ ہوئی تھی۔ انگلینڈ نے پاکستان کو سیریز کے پہلے میچ میں ڈک ورتھ لوئس میتھڈ کے تحت44 رنز سے شکست دی تھی جبکہ دوسرے میچ میں 4 وکٹوں سے کامیابی حاصل کی تھی اور تیسرے میچ میں 169 رنز سے فتح حاصل کر کے انگلینڈ نے سیریز جیت لی :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *