وکی لیکس نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا بھانڈا پھوڑدیا

Image result for wikileaks about occupied kashmir

وکی لیکس نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا پول کھولتے ہوئے بتایا ہے کہ بھارت منظم طریقے سے کشمیری عوام پر مظالم ڈھا رہا ہے اور امریکی حکام تمام صورتحال سے بخوبی واقف ہے۔ دنیا میں چھپے ہوئے راز افشا کرنے والے آسٹریلین شہری جولین اسانج کی مشہور ویب سائٹ وکی لیکس نے بھارتی مظالم کو دنیا کے سامنے پیش کردیا ہے۔ وکی لیکس میں بتایا گیا ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں ایک منظم طریقے سے مظالم ڈھا رہا ہے جس میں بے گناہ و نہتے کشمیری عوام کو تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے جب کہ امریکا اس تمام صورتحال سے بخوبی واقف ہے اور اس کے پاس بھارتی فوج اور پولیس کے شہریوں پر تشدد کے ٹھوس شواہد بھی موجود ہیں۔

وکی لیکس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ عالمی سطح پر امداد کے حوالے سے مشہور تنظیم ریڈ کراس کے نمائندوں نے 2005 میں بھارت کی جانب سے ہونے والے مظالم کے حوالے سے امریکی سفارتکاروں کو تفصیلی بریفنگ دی تھی جس میں بتایا گیا تھا کہ 10 سال قبل تک مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے 300 حراستی مراکز تھے اور ان حراستی مراکز میں شہریوں کو بجلی کے جھٹکے دیئے جاتے تھے جب کہ زیرحراست کشمیریوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بھی بنایا گیا۔ بھارتی فوج کےمظالم،انسانی حقوق کی خلاف ورزی پرامریکی سفارتکاروں کوتشویش تھی۔ واضح رہے کہ گزشتہ دو ماہ سے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے مظالم میں تیزی آئی ہے اور قابض بھارتی فوج کی جانب سے چھروں والی گن کے استعمال سے اب تک متعدد کشمیری نابینا اور کئی شہید ہوچکے ہیں :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *