چیف الیکشن کمشنر کی تقرری، اپوزیشن لیڈر نے تین مہینے کا وقت مانگ لیا

khurshid shahقائدحزب اختلاف خورشید شاہ نے چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کے لئے سپریم کورٹ سے 3 ماہ کا وقت مانگ لیا۔
چیف الیکشن کمشنر کی تقرری سے متعلق خورشید شاہ نے آج بروز منگل سپریم کورٹ میں جواب جمع کرا دیا ہے۔
جواب میں کہا گیا ہے کہ چیف الیکشن کمشنر کا تقرر وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر کی مشاورت سے ہوتا ہے اور وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر مختلف ناموں پر غور کر رہے ہیں۔جواب کے مطابق چیف الیکشن کمشنر آئینی عہدہ ہے، لہٰذا تقرری سے متعلق تمام پارلیمانی پارٹیوں کو اعتماد میں لیا جائے گا۔خورشید شاہ نے تحریری جواب میں عدالت سے استدعا کی ہے کہ 'ہم مشاورت کو وسیع البنیاد بنا کر تمام جماعتوں کو اعتماد میں لینا چاہتے ہیں، لہٰذا عدالت چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کے لیے 3 ماہ کا وقت دے۔
واضح رہے کہ رواں ماہ چودہ اکتوبر کو سپریم کورٹ آف پاکستان نے حکومت کو دو ہفتوں کے اندر مستقل الیکشن کمشنر کا تقرر کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگر 28 اکتوبر تک یہ تعیناتی نہ کی گئی تو عدالت اس عہدے پر قائم مقام طور پر فائز اپنے جج کو واپس بلوا لے گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *