تھر پارکر:وزیر اعلیٰ سندھ کےآٹھ دوروں کے باوجود حالات بہتر نہ ہوسکے

thar1تھرپارکر میں قحط ، بچوں، مویشیوں کی اموات بدستور جاری ہیں، لوگ بیراجی علاقوں کی جانب نقل مکانی کر رہے ہیں جبکہ وزیر اعلیٰ سندھ کی جانب سے آٹھ مرتبہ تھرپارکر کا دورہ کرنے کے باوجود حالات بہتر نہ ہوسکے۔
تین سال سے بھوک، افلاس، پیاس کی لپیٹ میں تھرپارکر اور عمرکوٹ کے صحرائی علاقوں میں موت کا راکاس راج کرنے لگا۔ مٹھی کے نواحی گاؤں کا ایک ماہ کا بچہ ولی محمد حیدرآباد کے ہسپتال میں چل بسا۔ رواں ماہ ہلاکتوں کی تعداد بتیس ہوگئی۔
وزیر اعلیٰ سندھ کے آٹھ دوروں کے باوجود تھر میں حالات زندگی تبدیل نہ ہوسکے۔ بچوں، مویشیوں کی ہلاکتیں، پانی، اناج، چارہ نہ ہونے کی باعث تھری باشندے بی بس بن کر رہ گئے ہیں۔ کئی خاندانوں نے بیراجی علاقوں کا رخ کردیا ہے۔ تھرپارکار میں ڈیڑھ سو کے قریب اور عمرکوٹ ضلع میں ایک سو بیاسی ڈاکٹروں کی خالی جگہیں پر نہ ہوسکی۔ جبکہ تھرپارکر میں پی پی ایچھ آئی کی زیرنگرانی چلنے والے دیہاتوں میں قائم سینٹر بند پڑے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *