سرکاری گندم کی افغانستان برآمد، بھاری بے ضابطگیوں پر نیب کا بڑا ایکشن

آٹا تھیلوں میں کھاد برآمد کر کے منافع کمانے کا بھی انکشاف،نیب نے تحقیقات شروع کر دیں، ایکسپورٹرز سے تمام تفصیلات مانگ لیں
 فوٹو : فائل

 لاہور -نیب نے پنجاب اور سندھ سے سرکاری گندم و آٹے کی طورخم کے راستے افغانستان ایکسپورٹ میں اربوں روپے کی بے ضابطگیوں کی اطلاعات پر تحقیقات شروع کرتے ہوئے ایکسپورٹرز سے تفصیلات حاصل کر لیں جبکہ ابتدائی مرحلے میں کسٹم اور وفاقی وزارت خوراک کے چند افسروں کو معطل بھی کر دیا گیا۔nab1

کچھ عرصہ قبل نیب پشاور کی جانب سے سرکاری گندم ایکسپورٹ کرنے والے تمام فلور مل مالکان اور پرائیویٹ افراد کو نوٹس میں کہا گیا تھا کہ نیب سرکاری گندم کی ایکسپورٹ میں فوڈ حکام کے ساتھ ساتھ کسٹم حکام کی جانب سے اپنے اختیارات سے تجاوز اور طورخم چیک پوسٹ کے راستے گندم ایکسپورٹ میں مبینہ بے قاعدگیوں اور کرپشن کے حوالے سے تحقیقات کر رہا ہے۔ اس لیے ہر ایکسپورٹر نیب کی جانب سے مقررکردہ تاریخ پر نیب پشاور میں پیش ہو کر شامل تفتیش ہو اور صوبائی محکمہ خوراک کیساتھ معاہدے کے علاوہ بلٹی کارگو معاہدے کی نقول، امپورٹر، ایکسپورٹ ایجنٹ کے مکمل کوائف، دو برس کی بنک سٹیٹمنٹ، ای فارم، جی ڈی نمبر، گندم کی مقدار اور ایکسپورٹ کی تاریخ، جس ٹرک یا ٹرالر میں گندم یا آٹا افغانستان گیا اس کا رجسٹریشن نمبر، کلیم کردہ ریبیٹ سبسڈی کی رقم اور حاصل کردہ سبسڈی کی تفصیلات فراہم کی جائیں :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *