جہاز سے چھلانگ لگانے والے 9 افراد کے ساتھ کیا ہوا؟ عینی شاہد کا دل دہلانے والا انکشاف!

طیارہ

ایبٹ آباد  -حویلیاں کے پہاڑمیں گرکرتباہ ہونے والے بدقسمت طیارے کے تباہ ہوتے ہی سب سے پہلے پہنچنے والا عینی شاہد بھی سامنے آگیا ہے، اس کا کہنا ہے کہ وہ دورسے جہازمیں چیخنے چلانے کی آوازیں سن رہا تھا لیکن جب تک وہ جہاز کے قریب پہنچا اس سے پہلے ہی جہاز میں دھماکے کے ساتھ آگ بھڑک اٹھی، جہاز کے تباہ ہونے سے قبل 9 افراد نے ہنگامی انخلا والے دروازے سے چھلانگ بھی لگائی لیکن جہاز انکے اوپر ہی آن گرا۔ نجی ٹی وی کے مطابق مجاتہ گاؤں کے رہائشی اور پولیس کانسٹیبل زاہد کا کہنا تھا کہ جب اس کی نظر جہاز پر پڑی تو اس وقت تیارہ گاؤں کے عین اوپر انتہائی کم اونچائی پر ہچکولے کھا رہا تھا اور اچانک جہاز پہاڑ سے ٹکرا گیا جس کے بعد اس میں آگ بھڑک اٹھی۔

طیارہ

زاہد کا کہنا تھا جہاز اس وقت تیزی سے زمین کی طرف آرہا تھا اس وقت اس نے دیکھا کہ تیارے کا ہنگامی انخلا والا دروازہ کھلا جس میں سے تقریباً 9 افراد نے چھلانگ لگا دی لیکن انکی قسمت میں زندگی نہیں تھی، جیسے ہی وہ افراد نیچے آئے ان کے اوپر ہی طیارہ آن گرا۔ زاہد کا کہنا تھا کہ جب میں نے طیارے کو نیچے آتے دیکھا تو اس نے موٹرسائیکل پر جہاز کے پیچھے پیچھے جانا شروع کردیا اور ساتھ دیگردوستوں کو بھی ٹیلیفون کر کے اطلاع دی اور مدد کیلئے پہنچنے کے لیے کہا۔ طیارے کے تباہ ہونے کے فوری بعد میں وہ پہلا شخص تھا جوکہ موقع پر پہنچا، جہاز تین حصوں میں تقسیم ہوگیا تھا اور دو حصوں میں آگ بھڑک رہی تھی۔ اس وقت میں مسافروں کی مدد کیلئے چیخیں واضح طور پر دور سے سن رہا تھا۔ اس سے پہلے میں کچھ کرتا اچانک فیول ٹینک پھٹ گیا اور زوردار دھماکے کے بعد پورے جہاز میں آگ بھڑک اٹھی۔ زاہد نے اس موقع پر پائلٹ کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ پائلٹ نے جہازکو گاؤں کے اوپر گرنے سے بچائے رکھا جس کے باعث کئی زندگیاں بچ گئیں اور اگر جہاز آبادی والے علاقے میں گر جاتا تو سینکڑوں زندگیاں خطرے میں پڑ سکتی تھی :-

Image result for ‫اے ٹی آر طیارہ حادثہ‬‎

طیارہ

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *