چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کیلئے 24 نومبر تک مہلت

supreme courtسپریم کورٹ آف پاکستان نے حکومت کو چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کے لیے 24 نومبرتک مہلت دیتے ہوئے کہا ہے کہ24 نومبر کو الیکشن کمشنر کی تقرری نہ ہونے کی صورت میں قائم مقام چیف الیکشن کمشنر خودبخود دستبردار ہو جائیں گے۔
سپریم کورٹ میں چیف الیکشن کمشنر کی تقرری سے متعلق کیس کی سماعت آج بروز جمعرات ہوئی۔سماعت کے دوران اٹارنی جنرل سلمان اسلم بٹ نے عدالت کو بتایا کہ وزیراعظم نواز شریف اور قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ کے درمیان مشاورت کے بعد تین ناموں پر حتمی اتفاق کیا گیا تھا۔لیکن ان میں سے دو شخصیات نے اس عمل کا حصہ بننے سے انکار کردیا۔اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ اس معاملے کے بعد وزیراعظم کو طے شدہ دورے پر بیرون ملک جانا پڑگیا، جبکہ قائد حزب اختلاف بھی طبی رخصت پر لندن میں موجود ہیں۔جس پر چیف جسٹس ناصرالملک نے ریمارکس دیئے کہ آپ نے یہ عمل پہلے شروع کیا ہوتا تو اب تک مکمل بھی ہوچکا ہوتا۔
عدالت نے اٹارنی جنرل کی استدعا پرحکومت کو 24 نومبر تک کی مہلت دیتے ہوئے کہا کہ آپ اس عمل کو مکمل کرلیں، یہ نہ ہو کہ وزیراعطم پھر دورے پر چلے جائیں۔اٹارنی جنرل نے عدالت کو یقین دلایا کہ 24 نومبر تک چیف الیکشن کمشنر کی تقرری ہو جائےگی۔جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ اگر 24 نومبرتک تقرری نہ ہوئی تو قائم مقام چیف الیکشن کمشنر کی نامزدگی خود بخود واپس ہو جائے گی اور سپریم کورٹ اپنا جج واپس لے لے گی۔بعد ازاں مقدمے کی سماعت 24 نومبر تک ملتوی کردی گئی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *