بدقسمت شہزادی سیتا وائٹ اور عمران خان کی کہانی۔۔۔۔۔ قسط نمبر 39

 sita whiteبشکریہ وینیٹی فیئر میگزین نیویارک

اسی دوران، وکٹوریہ نے، بعض خبروں کے مطابق، نیویارک کے طویل عرصہ سے تنہا زندگی گزارنے والے متمول سرمایہ دارٹیڈی فورسٹمین کے ساتھ ڈیٹوں پر جانا شروع کر دیا۔
وکٹوریہ کہتی ہے کہ کرسٹی کے یہاں اس کی جانب سے مصنوعی اشیاء کی فروخت شروع کرنے کا سبب یہ ہے کہ ایسا کئے بغیر اس کے پاس بیورلے ہلز والے اپنے گھرپر موجود2.5ملین ڈالر کا رہن اتارنے کیلئے سرمایہ نہیں ہے۔اس کی طلاق کے ریکارڈ میں ،وہ دعویٰ کرتی ہے کہ، وائٹ کے ٹرسٹ کے علاوہ ، جس کی اصل رقم کو وہ استعمال کرنے کی اجازت نہیں رکھتی، اس کی مجموعی دولت 15.6ملین ڈالرکے لگ بھگ تھی۔
سیتا اپنی موت سے چند ماہ قبل،وکٹوریہ کے بقول، اس کے یہاں ’’بہت بار‘‘ آیا کرتی تھی۔ وکٹوریہ کا کہنا ہے، ’’وہ واقعی بہت تنہاء تھی۔اس کے دوست لڑکے اس کی زندگی میں آتے اور چلے جاتے مگر کبھی کسی سے زیادہ گہرا تعلق نہ ہوتا۔موسم بہار میں، جیساکہ سیکسبیز کے ساتھ اس کے تعلق کی اصل حقیقت آشکار ہو رہی تھی اور وہ ان کے ساتھ اپنے گہرے تعلق پر شدید افسوس کا مظاہرہ کر رہی تھی، سیتا نے اکاؤنٹینٹ وینڈی برلن سے کہا کہ وہ صرف اور صرف اپنی بیٹی ٹیرن کیلئے زندہ ہے۔اس کی اس بات کو یاد کرکے اب یوں لگتا ہے کہ جیسے اسے اپنی موت کا اندازہ پہلے ہی ہو گیا تھا۔‘‘

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *