زندگی سے موت کا سفر

طحہٰ عالم صدیقی

Taha Alam Siddiqui

یہ ایک حقیقت ہے کہ انسان اس دنیا میں کسی نہ کسی مقصد کے تحت آتا ہے  اور دنیا میں آ کے دنیاوی چیزوں میں مشغول ہو جاتا ہے جو چار دن کے مانند کی حیثیت رکھتی ہے اور پھر اندھیری رات – بانی پاکستان قائد اعظم محمّد علی جناح بھی ایک مقصد سے آئے  تھے اور اپنا مقصد پورا کر کے اس دنیا سے وفات پاگئے- ہر انسان کی آخری آرامگاہ قبر کی مٹی ہو تی ہے اور اس حقیقت سے انکار کیا جا سکتا – بڑ ے بڑ ے بادشاہ اور وزیر جو اس حقیقت سے انکار کرتے تھے وو بھی اس کا مزہ چکھ چکے ہیں – دنیا تو آخرت کی کھیتی ہے جو یہاں بوئیں گے اس کو آخرت میں کاٹنا ہے –

اس لئے ہر انسان کے پاس دنیا میں آنے کا کوئی نہ کوئی اچھا مقصد ضرور ہونا چاہئے تاکہ اس پر عمل کر کے دین و دنیا دونو ں میں کامیاب ہوا جاسکے  اور دنیا سے جانے کے بعد لوگ اسے اچھے نام سے یاد رکھیں  یہ تو آذان سے نماز کا سفر ہے جو یونہی گزر جاۓ گا انسان اکیلا ہی آیا ہے اور اکیلا ہی جاۓ گا ہمارے پاس زندگی میں آنےکا اچھا مقصد ضرور ہونا چاہئے تاکہ ہمیں تا قیامت یاد رکھا جاۓ –

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *