سندھ حکومت اور آئی جی سندھ کے درمیان سرد جنگ ، اے ڈی خواجہ کی تبدیلی !

38

کراچی ۔ سندھ حکومت اور آئی جی سندھ کے درمیان شروع سے ہی سرد جنگ جاری تھی ، اے ڈی خواجہ سے سندھ حکومت کانسٹیبلز کی بھرتیاں میرٹ کے بجائے کوٹے پر کرانا چاہتی تھی جس پر اے ڈی خواجہ ڈٹ گئے این ٹی ایس ٹیسٹ کے ذریعے میرٹ پر بھرتی کیں ، دوسری وجہ ٹرانسفر پوسٹنگ بنی ، اے ڈی خواجہ حکومت کے من پسند افسران کی تعیناتی اور تبادلوں میں رکاوٹ بنے رہے۔

اے ڈی خواجہ کی جانب سے ایس ایس پی ملیر راو انوار خان کو معطلی میں بھی اہم کردار ادا کرنے اور سندھ حکومت کی اہم شخصیت کے قریبی کاروباری دوست سے ناراضگی سے اختلافات میں شدت آگئی ،ڈیفنس میں ایک کاروباری شخصیت کے گھر سے بھاری تعداد میں اسلحہ کی برآمدگی پر بھی سندھ حکومت اور اے ڈی خواجہ کے درمیان جلتی پر تیل کا کام کیا۔

اہم شخصیت کی ہدایت پر سندھ حکومت نے اے ڈی خواجہ کو جبری رخصت پر بھیجا جس پر اے ڈی خواجہ نے عدالت سے رجوع کیا اور عدالت نے ان کے تبادلے پر حکم امتناعی بھی جاری کیا ، وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ نے وقتی طور پر صورتحال کنٹرول کرنے کے لئے آئی جی کی تبدیلی موخر کردی جیسے ہی سپریم کورٹ کی جانب سے اعلی افسران کے گریڈ تنزل کیئے گئے تو سندھ حکومت نے اپنا کام دیکھا دیا اور فوری طور پر وفاق کو اے ڈی خواجہ کی تبدیلی کے لئے خط لکھ دیا۔

سندھ حکومت کی جانب سے نئے آئی جی کے لئے چئیرمین اینٹی کرپشن غلام قادر تھیبو ، ایڈیشنل آئی جی ٹریفک خادم حسین بھٹی اور ایڈیشنل آئی جی ریسرچ ،ڈیولپمنٹ اور انسپیکشن سردار عبدالمجید دستی کے نام بھیجے گئے ہیں جس میں غلام قادر تھیبو سب سے زیادہ فیورٹ ہیں:۔

 

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *