کلہاڑی لگنے سے درخت کی جڑ سے خون رسنے لگا اور رونے کی آواز بھی آنا شروع ہوگئی ، گورکن کا حیران کن انکشاف !

news

کراچی ۔ کراچی کے علاقے بلوچ گوٹھ کے قبرستان کے گورکن عمر حکیم نے زندگی کا انتہائی اہم ترین واقعہ سناتے ہوئے بتایا کہ قبر کی کھدائی کے دوران کلہاڑی لگنے سے قریب موجود پرانے درخت کی جڑ سے خون رسنے لگا تھا۔ تفصیلات کے مطابق باغ کورنگی کے علاقے بلوچ گوٹھ کے مندوپیر قبرستان کے گورکن عمر حکیم نے بتایا کہ مذکورہ قبرستان قیام پاکستان سے قبل کا ہے۔ اس میں درجنوں قدیم قبریں اب بھی موجود ہیں۔ اس کو یہاں کام کرتے ہوئے18 سال ہوچکے ہیں۔ عمر حکیم نے بتایا کہ اس قبرستان میں مندوپیر بابا نامی بزرگ کا چھوٹا سا مزار موجود ہے، جس کے ساتھ 100 سالہ پرانا درخت ہے۔ یہاں پر کورنگی کے رہائشی سید اسماعیل شاہ نے ڈیرہ بنایا ہوا تھا۔ وہ مندوپیر بابا کی قبر کی دیکھ بھال کرتے تھے اور قبرستان میں موجود قدیم درختوں سے خاص لگاﺅ رکھتے تھے۔ جنوری 2017ءمیں سید اسماعیل شاہ کا انتقال ہوگیا۔ وصیت کے مطابق ان کی قبر مزار کے ساتھ ہی تیار کی جارہی تھی۔قبر بنانا شروع کردی۔ کھدائی کے دوران مزار کے ساتھ موجود قدیم درخت کی ایک جڑ درمیان میں آگئی۔ جونہی اسے کاٹنے کے لئے اس پر کلہاڑی کی ضرب لگائی گئی تو جڑ سے خون رسنے لگا اور ساتھ ساتھ رونے کی آواز بھی آنا شروع ہوگئی۔ اس پر گورکن عمر حکیم خوفزدہ ہوگیا۔ اس وقت وہاں موجود لوگوں نے اسے بتایا کہ اسماعیل بابا پرانے درختوں کو کاٹنے سے منع کرتے تھے اور کہتے تھے کہ اگر ایسا کرنا ناگزیر ہو تودرخت کے پاس جاکر کہا جائے کہ بہت مجبوری میں اسے کاٹنا پڑرہا ہے۔ اس کے بعد درودشریف پڑھتے ہوئے اسے کاٹا جائے۔ عمر حکیم کے مطابق اس ہدایت پر عمل کرتے ہوئے اس نے درخت کی جڑ کاٹنا شروع کی تو خون رسنا بند ہوگیا:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *