سیلفی کے شوق میں ٹام کروز کے خوفناک اقدام نے فلم کی کاسٹ کو ہلا کررکھ دیا!

Image result for tom cruise

ہالی وڈ اسٹار ٹام کروز کے دنیا بھر میں کروڑوں پرستار ہوں گے اور اپنی فلموں کے لیے زندگی کو داﺅ پر لگانے سے بھی گریز نہیں کرتے مگر ایک اچھی سیلفی لینے کی خواہش نے انہیں موت کے منہ میں پہنچا دیا تھا۔ جی ہاں ٹام کروز نے اپنی نئی فلم 'دی ممی' کی شوٹنگ کے دوران ہیلی کاپٹر میں سفر کرتے ہوئے دو ہزار فٹ کی بلندی پر سیلفی لینے کی کوشش کی جس کے دوران وہ مرتے مرتے بچے۔

53 سالہ اداکار نے اپنے ساتھی اداکاروں اور فلم کے عملے کو اس وقت خوفزدہ کردیا جب وہ ہیلی کاپٹر کے باہر لٹک کر اپنی سیلفی لینے کی کوشش کرنے لگے۔

یہ واقعہ افریقہ کے مشہور صحرائے نمیب میں شوٹنگ کے دوران پیش آیا تھا جس کا انکشاف فلم میں ٹام کروز کے ساتھی اداکار کورٹنی بی ونیس نے کرتے ہوئے بتایا 'ٹام نے ہم سب کو کہا تھا کہ کوئی تصویر نہیں لینی، ہم سب ہیلی کاپٹر میں بیٹھے اور پھر ٹام کروز نے کہا کہ کیاکچھ تصاویر لیناچاہتے ہیں؟اور پھر وہ ہیلی کاپٹر کے باہرلٹک کر ہم سب کی سیلفیاں لینے لگا'۔

یو ایس اے ٹوڈے سے بات کرتے ہوئے ٹام کروز نے بھی اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ' میں تو صرف مختلف قسم کی تصویر لینا چاہتا تھا'۔ ان کے بقول ' تو میں نے اپنی سیٹ بیلٹ ہٹائی تاکہ باہرلٹک سکوں'۔

ان کی ساتھی اداکارہ اینابیل ویلس نے بتایا ' ٹام کو میرا فون لے کر خطرناک صورتحال میں اپنی تصاویر لیناپسند تھا، میرے خدا وہ تو اپنے آپ کو مارنے والا لگتا ہے'۔ اس سے قبل بھی ٹام کروز نے اپنی فلم سیریز مشن امباسبل کے لیے انتہائی خطرناک اسٹنٹ خود کیے تھے خاص طور پر روگ نیشن میں طیارے پر پھسلنے کے ایک سین کو ٹام کروز نے بغیر اسٹنٹ مین کے شوٹ کروایا۔ مگر سب سے خطرناک اسٹنٹ وہ تھا جب ٹام کروز نے زیرآب چھ منٹ تک سانس روک کر ایک سین کی عکسبندی کروائی۔

ٹام کروز نے اس منظر کی عکسبندی کے دوران ایک ٹیک کے دوران چھ منٹ سے کچھ زیادہ پانی کے اندر سانس روک کر گزارے جو کہ حیران کن تھا۔ اس فلم کی شوٹنگ دو ہفتے میں مکمل ہوئی مگر اس کے لیے تیاری دو ماہ تک جاری رہی تھی کیونکہ ٹام کروز کو پانی کے اندر چھ منٹ سے زائد دورانیے تک سانس روک :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *