عالمِ اسلام کی بہادر بیٹیاں

Prof.Khalil Touqar

پروفیسرڈاکٹر خلیل طوقار نسلاً ترک ہیں۔ ان کی پیدائش استنبول (ترکی) میں ہوئی۔ ترکی میں ہی انھوں نے ابتدائی اور اعلیٰ تعلیم حاصل کی۔ فی الوقت وہ استنبول یونیورسٹی کے صدر شعبۂ اردو ہیں۔ڈاکٹر طوقار کی تقریباً دو درجن کتابیں منظر عام پر آ چکی ہیں۔وہ ترکی سے شائع ہونے والے اردو کے واحد ادبی مجلہ”ارتباط” کے مدیر بھی ہیں۔ یورپین اردو رائٹرس سوسائٹی ، لندن نے سن 2000ء میں انھیں ”علامہ اقبال” ایوارڈ سے نوازا۔اس کے علاوہ عالمی اردو مرکز، لاس انجلس اور دیگر قومی وبین الاقوامی اداروں کی جانب سے انھیں اعزاز سے نوازا جا چکا ہے۔خلیل طوقار جنوبی ایشیا سٹریٹجک ریسرچ سینٹر GASAM کے عالی شورائے مشاورت کے ممبر بھی ہیں -پیش خدمت ہے آپ کی 'دنیا پاکستان' کے لیے لکھی گئی ایک تازہ تحریر(ادارہ)


’’قرہ فاطمہ‘‘ سے ’’فاطمہ بنت عبداللہ‘‘ اور ’’ترکن ترکمان تکین‘‘ تک

قرہ فاطمہ ترکی تاریخ کی اُن بہادر خواتین میں سے ہیں جن کی نڈر شخصیت، ملک و قوم سے محبت اور روز و شب جد و جہد نے ترکی قوم اور ملک کو آزاد اور سرخرو کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ قرہ فاطمہ نے بلقان کی جنگوں، قفقاز کے محاذ، پہلی جنگ عظیم اور ترکی کی جنگ آزادی میں شرکت کی۔ اُنھوں نے جنگ آزادی کے دوران مختلف محاذوں پر نہ صرف بنفس نفیس شرکت کی بلکہ سپاہیوں پر مشتمل ایک فوجی دستے کی کمان بھی سنبھال لی۔ یونانیوں سے جنگ کرتے ہوئے وہ گرفتار بھی ہوئیں مگر جلد ہی فرارکرکے اپنے دستے کے ساتھ بورسہ شہر پر ترکی فوج کی فتح اور یونانیوں کو شکست دینے میں اول اول رہیں۔
جنگ آزادی کے بعد اُنھیں ’’تمغۂ استقلال‘‘ سے نوازا گیا اوراُن کے نام پنشن بھی مقرر کی گئی لیکن اُنھوں نے یہ پنشن لینے سے انکار کیا اور اپنی پنشن کو ’’ہلال احمر‘‘ کے حوالے کی۔ قرہ فاطمہ ۱۹۵۵ء میں استنبول میں انتقال کرگئیں۔
چونکہ مغربی نوآبادیاتی طاقتوں اور روس سے صدیوں سے جنگیں جاری تھیں اور یورپی ممالک کی انگیخت پر عثمانی سلطنت کی عیسائی اکلیتوں اور بالخصوص بدوی عرب باشندوں نے بغاوتوں کا ایک ختم نہ ہونے والے سلسلے کا آغاز کیا تو اِن مسلسل حملوں اور بغاوتوں کا ناگزیر نتیجہ یہ ہوا کہ ترکی نسل کے مردوں کی تعداد کافی حد تک کم ہوگئی لہٰذا اپنے وطن کی حفاظت کی خاطر ترکی کی خواتین نے بھی اپنے مردوں کے ساتھ ساتھ کبھی جنگ کے محاذوں پر، کبھی اسلحہ بناتے ہوئے، کبھی جنگی سامان کو محاذوں تک پہنچاتے ہوئے اور بالخصوص جنگ آزادی کے ہر مشکل مرحلے پر ترک مردوں کے شانہ بہ شانہ بہادری سے اپنے وطن اور قوم کی حفاظت کی اور بے شمار قربانیاں دیں۔
راقم الحروف کی والدہ مرحومہ کی نانی اماں نے بھی جنگ آزادی میں محاذ پر جنگی سامان لے جاتے ہوئے اُن کی دیورانی کو پکڑ کر بے چاری کی عصمت دری کرنے کے بعد اپنی سنگینوں سے بیچاری کی چھاتی سینے سے الگ کرنے والے تین یونانی سپاہیوں کو قتل کرکے نارِ جہنّم میں رسید کیا تھا۔ اِس بہادری اور ہمت کی نشانی اُن کی گردن پر تین سنگینوں کے زخم تھے جوکہ مرتے ہوئے یونانی فوجیوں نے اُن کی گردن میں گھسائی تھیں۔ مگر اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم سے نہ صرف وہ زندہ رہیں بلکہ فی الفور اپنے حصے کا جنگی سامان اپنے کندھے پر لاد کر محاذ کی جانب بڑھنے والے کاروان تک پہنچ بھی گئیں۔
اللہ تعالیٰ اُن تمام مرد و زن، جوان اور بوڑھے اور بچے شہداء اور غازیان وطن کو جنّت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے۔ آمین
اور یہاں صرف ترک قوم کی خواتین نہیں بلکہ تمام عثمانی مملکت کے طول و عرض میں موجود اسلام کی بہادر بیٹیاں اسلام سے محبت اور اسلامی برادری اور آزادی کی اُمنگیں دِل میں لیے جان و مال کی قربانیاں دینے میں ایک آنکھ نہیں جھپکتیں۔ اُن میں سے ایک فاطمہ بنت عبداللہ تھیں۔ ۱۹۱۱ء میں آج کا لیبیا اور اُس زمانے کے طرابلس اور بنغازی عثمانی سلطنت میں شامل تھے۔بزعم خود مغرب کے عالی شان اور مہذب مغربی ممالک نے اپنے استعماری اغراض و مقاصد کے لیے عالم اسلام کو آج کی طرح اُس وقت میں بھی میدانِ جنگ میں تبدیل کیا رکھا تھا اور اُن کی لالچی نظریں اسلام کے آخری قلعہ مملکت عثمانی یعنی ترکی پر مرکوز تھیں اور اُس کوٹکڑا ٹکڑا کرنے کی غرض سے شدید اور جان لیوا وار کررہے تھے۔ اُس عہد میں مغربیوں کے دِل و دماغ میں استعماری اور نو آبادیاتی جنون کا بھوت جو تھا وہ اٹلی کے سر پر بھی سوار ہوا اور اٹلی اپنے سب سے نزدیک عثمانی علاقہ طرابلس اور بنغازی پر اپنی تمام تر طاقت سے حملہ کیا۔ چونکہ اُس وقت مصر پر انگریزوں کا قبضہ تھا تو اُن لوگوں نے عثمانی فوج کو لیبیا جانے کے لیے راستہ نہیں دیا اور عثمانیوں کو بحری راستے سے جانے کی سہولت بھی نہیں تھیں۔
آخر جنگ کے آغاز سے قبل طرابلس میں موجود کچھ ترک سپاہی اور طرابلس اور بنغازی کے عرب قبائل کے جوان مل کر اطالیائی فوج کو ساحل کے علاقے میں روکا اور بعد میں اِن مجاہدوں کی امداد میں انور پاشا اور مصطفی کمال (اتاترک) جیسے جوان سال ترکی افسر بھی بھیس بدل کر طرابلس پہنچے۔ یہ مجاہد اطالیائی فوج کو آگے بڑھنے نہیں دے رہے تھے کہ اچانک روس کی سربراہی میں بلقانی ممالک نے عثمانی سلطنت پر حملہ کیا اور اِس طرح پہلی جنگ بلقان شروع ہوئی۔ چونکہ عثمانی فوج اِس حملہ کے لیے تیار نہیں تھی اور اُس کے اہم اہم جوان افسرطرابلس پہنچے ہوئے تھے لہٰذا ترکوں کو سخت شکست ہوئی اور بلقانی فوجیں ادرنہ (آڈریاناپول)پر قبضہ کرکے عثمانی دارالخلافت استنبول تک پہنچ گئیں۔ پھر طرابلس میں موجود ترکی افسر مجبور ہوکر ترکی واپس پہنچے اور بلقان جنگ میں شامل ہوئے۔ اُن کے طرابلس اور بنغازی سے الگ ہوتے ہی طرابلسی مجاہدوں کو شکست ہوئی اور پھر اِس طرح سے لیبیا میں اٹلی کی استبداد اور تشدد کا دَور شروع ہوا جس میں ہزاروں معصوم لیبیائی عوام کی جانیں تلف ہوئیں اور سیکڑوں مسلمان بیبیوں کی عصمت دری ہوئی۔
اُنہیں دِنوں میں معروفِ زمانہ ابوالکلام آزاد کے اخبار الہلال میں ایک طرابلسی لڑکی فاطمہ بنت عبداللہ کے بارے میں ایک خبر شائع ہوئی۔ اِس خبر میں ایک چشم دید گواہ ترک افسر ڈاکٹر اسماعیل بیگ کی زبانی ایک لیبیائی لڑکی فاطمہ بنت عبداللہ کی کہانی تھی۔ اِس خبر کے مطابق فاطمہ کے والد عبداللہ مجاہدوں میں شامل تھے اور وہ اپنی والدہ کی ہمراہی میں زخمیوں کو پانی پلارہی تھی۔ایک دِن ہوا یہ کہ نوری بیگ کی کمان میں لیبیائی مجاہدین جن میں بیس ترک سپاہی بھی تھے جھڑپ کے دوران اطالیائی فوج کے گھیرے میں آگئے، مگر ہمت کرکے وہ اِس گھیرے سے باہر نکل آئے۔ اِس دوران کچھ شہداء بھی ہوئے اور کچھ زخمی بھی۔ فاطمہ اپنی مشک لے کر ایک زخمی ترک سپاہی کے پاس پہنچی تاکہ اُس کو پانی پلادے۔ وہ اپنی مشک زخمی ترک سپاہی کے منہ سے لگاکر پانی پلانے ہی والی تھی کہ ایک اطالیائی فوجی آپہنچا اوراُس نے فاطمہ کو گردن کے پیچھے سے زور سے پکڑلیا۔فاطمہ سے اُس کی یہ بدتمیزی برداشت نہیں ہوئی اور اُس نے زخمی ترک سپاہی کی تلوار زمین سے اُٹھا کر بڑی ہمت اور جرأت دکھا کر اُس اطالیائی فوجی کے ہاتھ پر ماری جس کی وجہ سے اُس بدتمیز کا ہاتھ اُس کے جسم سے الگ ہوگیا اور پھر فاطمہ زخمی سپاہی کو پانی پلانے لگی۔ اُتنی دیر میں اُس فوجی نے اپنی پستول سے پیچھے سے فائر کرکے اِس عظیم اور بہادر لڑکی کو شہید کردیا۔
شاید یہ خبر علامہ محمد اقبال کی نظرنواز ہوئی ہوگی کہ اُنھوں نے فاطمہ بنت عبداللہ کے نام مندرجہ ذیل نظم لکھی:

فاطمہ بنت عبداللہ
عرب لڑکی جو طرابلس کی جنگ میں غازیوں کو پانی پلاتی ہوئی شہید ہوئی
۱۹۱۲ء ؁

’فاطمہ‘! تُو آبروئے اُمّتِ مرحوم ہے
ذرہ ذرہ تیری مشتِ خاک کا معصوم ہے
یہ سعادت، حورِ صحرائی تری قسمت میں تھی
غازیانِ دِیں کی سقائی تری قسمت میں تھی
یہ جہادُاللہ کے رستے میں بے تیغ و سپر!
ہے جسارت آفریں شوقِ شہادت کس قدر!
یہ کلی بھی اِس گلستانِ خزاں منظر میں تھی!
ایسی چنگاری بھی یا ربّ، اپنی خاکستر میں تھی!
اپنے صحرا میں بہت آہو ابھی پوشیدہ ہیں
بجلیاں برسے ہوئے بادل میں بھی خوابیدہ ہیں
’فاطمہ‘!گو شبنم افشاں آنکھ تیرے غم میں ہے
نغمۂ عشرت بھی اپنے نالۂ ماتم میں ہے
رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے!
ذرہ ذرہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
ہے کوئی ہنگامہ تیری تربتِ خاموش میں
پل رہی ہے ایک قومِ تازہ اِس آغوش میں
بے خبر ہوں گرچہ اُن کی وُسعتِ مقصد سے مَیں
آفرینش دیکھتا ہوں اُن کی اِس مرقد سے مَیں
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
دیدۂ انساں سے نامحرم ہے جن کی موجِ نور
جو ابھی اُبھرے ہیں ظلمتِ خانۂ ایّام سے
جن کی ضَو نا آشنا ہے قید صبح و شام سے
جن کی تابانی میں اندازِ کہن بھی نَو بھی ہے
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پَرتَو بھی ہے

خوشی کی بات یہ ہے کہ اسلام کی بیٹیوں میں یہ جد و جہد کی روح کل کی طرح آج بھی تر و تازہ اور زندہ ہے اور جب بھی ضرورت پیش آئے تب اُن کی یہ روح اپنا جوہر دکھاتی ہے اور اِس امر کو ظاہر کرتی ہے کہ وہ بہادری میں اپنے مردوں سے کچھ کم نہیں۔ جس طرح مصر میں رابعہ کے میدان میں اسماء شہید ہوئی جس طرح ۱۵ جولائی ۲۰۱۶ء کو ترکی میں ملک دشمن کچھ فوجیوں نے اپنے بیرونی آقاؤں کو خوش کرنے کے لیے بغاوت کی اور ترکی کی منتخب حکومت کا تختہ اُلٹنے کی بے شرمی سے کوشش کی تو صدر مملکت رجب طیب ایردوغان کی دعوت پر لاکھوں ترک فوجی بغاوت کو ناکام بنانے اور اپنے وطن اور ملت کے تحفظ کے لیے منٹوں میں سڑکوں پر آگئے جن میں بے شمار خواتین بھی شامل تھیں۔ اور اُس رات ترکی میں ایک تاریخ مرقوم ہوئی اور ترکی کی جمہوریت شہیدوں کے خون سے بچائی گئی اِس میں ترکی کی اُن نڈر خواتین کا بھی اہم رول تھا۔ ترکن ترکمان تکین کا نام لیجئے یا عائشہ آیتاج کا، یا جنت ییغیت کا نام لیجئے یا زینب ساغیر کا، اِن خواتین نے اِس بہادری سے باغی فوجیوں کا مقابلہ کیا اِس بہادری کا نعم البدل نہیں اور اِن کی داستان کو دنیا کی تاریخ میں سنہرے حروف سے لکھابھی جائے کم ہے۔ کسی کے اوپر سے ٹینک گزارا گیا، کسی کے سینے سے باغی سنائیپر کی گولی گزگئی یا ایف ۱۶ جنگی طیارے کی فائرنگ سے کسی کا سر جسم سے الگ ہوگیا مگر نہ مرد نہ عورت نہ ہی بوڑھے کسی نے بھی اِن غداروں کے وحشیانہ حملوں سے خوف کھایا اور اُن ظالموں کو ناکام کیا۔ اُس رات ڈھائی سو ترک شہری شہید ہوگئے جن میں سے اکثریت عام شہریوں کی تھی اور ہزاروں شہری زخمی ہوگئے۔ اللہ تعالیٰ ترکی اور تمام عالمِ اسلام کو اِس طرح کے بکے ہوئے غداروں سے محفوظ رکھے اور اُن کو کبھی بھی سر اُٹھانے کی فرصت نہ دے۔ آمین!

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *