سپریم کورٹ بند گلی میں داخل ہوچکی ہے،عاصمہ جہانگیر

Related image

لاہور -سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کی سابق صدر عاصمہ جہانگیر نے کہا ہے کہ دکھ کے ساتھ کہنا پڑ رہا ہے کہ پاکستان کی سپریم کورٹ بند گلی میں داخل ہو چکی ہے، وکلاءسپریم کورٹ کوکتنی بار باوقار طریقے سے بند گلی میں سے نکالیں گے، وکلاءعدلیہ سے ڈرتے ہیں اور نہ ہی سویلین اور فوجی ڈکیٹیٹر سے ڈرتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے مقامی ہوٹل میں سپریم کورٹ بار کے آئندہ الیکشن کے سلسلے میں صدارتی امیدوار پیرکلیم خورشید کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا، عاصمہ جہانگیر نے مزید کہا کہ وکلاء ہمیشہ قانون کی بالادستی کی بات کرتے ہیں، وہ ہمیشہ قانون کی بالادستی کے لئے کھڑی ہوئی ہیں اور ہمیشہ کھڑی ہوتی رہیں گی، سپریم کورٹ کے فیصلوں پر تنقید کرنا وکلاءاور عوام کا بنیادی حق ہے، سابق چیف جسٹس پاکستان افتخار چودھری سے لے کر اب تک جتنے بھی غلط فیصلے ہوئے ہیں، ان پر وکلاء تنقید کریں گے۔ تنقید کرنے کو حق سمجھتے ہیں لیکن تنقید کی آڑ میں لاہور ہائی کورٹ کے کمرہ عدالت نمبر ایک میں ہنگامہ آرائی اور ہلڑبازی کی مذمت کریں گے، کمرہ عدالت نمبر ایک میں ہلڑبازی کا جو سلسلہ شروع ہوا ہے، اسے فوری بند ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے وکلاءکسی بھی گروپ سے ہوں، وہ ایک دوسرے کا احترام کرتے ہیں، موجودہ کابینہ نے رواں برس ایک بھی کام وکلاءکی ویلفیئر کا نہیں کیا، ایک سال میں سپریم کورٹ کے ممبران کی ہاﺅسنگ سوسائٹی پر کوئی کام نہیں ہوا، عاصمہ جہانگیر نے کہا بار ایسوسی ایشن کے لئے وکلاءحکومت سے فنڈز لیتے ہیں جو ان کا حق ہے، بار ایسوسی ایشنز کو فنڈز نہیں ملیں گے تو نظام عدل نہیں چلے گا، عاصمہ جہانگیر نے ججز تعیناتی کے طریقہ کار پر تنقید کرتے ہوئے اسے سیاسی کابینہ بنانے کے طریقہ کار کے مشابہہ قرار دے دیا۔ انہوں نے کہا کہ ججز تعیناتی کے طریقہ کار پر اعتراض ہے، ججوں کے تعیناتی کے طریقہ کار اور سیاسی کابینہ بنانے کے طریقہ کار میں فرق ہونا چاہیے۔ تقریب میں گروپ کے صدارتی امیدوار پیرکلیم خورشید، سیکرٹری کے امیدوار صفدر تارڑ، پاکستان بار کونسل کے ممبر عابد ساقی، جہانگیر اے جھوجہ ایڈووکیٹ سمیت سینئر وکلاءنے شرکت کی، صدارتی امیدوار پیر کلیم خورشید نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ بار کا صدر منتخب ہو کر اس عہدے کو ذاتی ایجنڈے کے لئے نہیں بلکہ وکلاءکی فلاح و بہبود کے لئے استعمال کروں گا، سپریم کورٹ کے ممبران سے وعدہ کرتا ہوں کے ایک سال میں وکلاءکی ہاﺅسنگ سوسائٹی کا مسئلہ حل ہوگا، سپریم کورٹ کے رولز میں ترامیم کیلئے تجاویز پر بھی عملدرآمد کروایا جائے گا۔ تقریب کے دوران عاصمہ جہانگیر نے جہانگیر اے جھوجہ ایڈووکیٹ کو دعوت دی کہ وہ انڈیپنڈنٹ گروپ کی سربراہی کریں اور بار کے آئندہ الیکشن کے لئے ممبران کی رہنمائی کریں :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *