آئی ایس آئی ہو ججز یا اٹارنی جنرل سب ریاست کے ملازم ہیں، سپریم کورٹ

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے ہیں کہ آئی ایس آئی ہو ججز یا اٹارنی جنرل سب ریاست کے ملازم ہیں۔

جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے دو رکنی بنچ نے فیض آباد دھرنا کیس کی سماعت کی۔ اٹارنی جنرل انور منصور کے پیش نہ ہونے پر عدالت نے برہمی کا اظہار کیا۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل سہیل محمود نے کہا کہ اٹارنی جنرل اقتصادی رابطہ کمیٹی میں گئے ہیں، وزیراعظم نے انہیں طلب کر لیا تھا۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ اٹارنی جنرل کا ای سی سی سے کیا تعلق، کیا وزیر اعظم سپریم کورٹ سے اہم ہیں، کیوں نہ اٹارنی جنرل کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا جائے، ان کے کہنے پر ہم نے کیس 11 بجے رکھا، آپ عدالت کی بے توقیری کر رہے کیا یہ مذاق ہے، اٹارنی جنرل کے فرائض میں عدالتی کام ہیں وزیر اعظم کے نہیں، عدالتی حکمنامے میں اٹارنی جنرل کیخلاف آبزرویشن دیں گے، سمجھ نہیں آتی ریاستی عہدیدار اقتدار میں ہوتے ہوئے کسی کے ملازم کیوں بن جاتے ہیں، انہیں عوام کے پیسے سے تنخواہیں دی جاتی ہیں، حکومت کو پاکستان کا خیال نہیں۔

جسٹس مشیر عالم کے استفسار پر ڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ فیض آباد دھرنا کیس میں عدالتی حکم کے مطابق پیمرا، آئی ایس آئی اور الیکشن کمیشن کی رپورٹس جمع کروا دی ہیں۔ جسٹس قاضی فائز نے کہا کہ کیا آئی ایس آئی کا مینڈیٹ خفیہ ہے، سیکرٹری دفاع کیوں پیش نہیں ہوتے، یہ ایک ریاست کا ملازم ہے، آئی ایس آئی، ججز اور اٹارنی جنرل سب ریاست کے ملازم ہیں۔ جسٹس مشیر عالم نے پوچھا کہ کیا ابھی تک کسی آپریٹر کا لائسنس منسوخ کیا گیا؟۔

جسٹس قاضی فائز نے ریمارکس دیے کہ دسویں بار پوچھ رہا ہوں پیمرا نے کیبل اپریٹرز کے خلاف کیا کارروائی کی، کیا پیمرا کیبل آپریٹرز کے خلاف کوئی تادیبی کارروائی کی، ایک ایسی ریاست میں رہ رہے ہیں جہاں میڈیا کنٹرول ہے، دن رات چینلز بند رہے سب کو پتہ لیکن پیمرا کو نہیں پتہ، کیا ہم جھوٹ بولنے والوں کی ریاست میں رہ رہے ہیں، کسی کو شرمندگی بھی محسوس نہیں ہوتی، چیئرمین پیمرا صاحب دھوکہ دینے پر آپکو خود پر فخر کرنا چاہیے، میں خوف میں نہیں رہ سکتا سب خوف میں بیٹھے ہوئے ہیں، کیا اس مقصد کے لیے آزادی حاصل کی گی تھی، آدھا ملک ہم نے کھو دیا، یہ پولیس ریاست ہے یا کیا ہے، پیمرا کو آج ہی ہدایت کررہے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *