حاملہ ہونے پر ملازمت سے نکالے جانے والی خاتون کا ادارے پر مقدمہ

فلموں اور ڈراموں کو آن لائن نشر کرنے والی سب سے بڑی کمپنی ’نیٹ فلیکس‘ پر سابق خاتون ملازمہ نے ملازمت سے نکالنے پر مقدمہ دائر کردیا۔

نیٹ فلیکس کی سابق منیجر نے کمپنی کے خلاف مقدمہ درج کراتے ہوئے لاکھوں ڈالر کے ہرجانے کا دعویٰ بھی دائر کردیا۔

نیٹ فلیکس کی جانب سے خاتون کو مبینہ طور پر اس وقت ملازمت سے فارغ کیا گیا تھا جب وہ ملازمت کے دوران حاملہ ہوگئی تھیں۔

شوبز ویب سائٹ ’ڈیڈ لائن‘ کے مطابق نیٹ فلیکس کی سابق انٹرنیشنل اوریجنل منیجر تانیہ زراک نے کمپنی کے خلاف امریکی عدالت میں 35 صفحات پر مشتمل درخواست دائر کردی۔

نیٹ فلیکس فلموں اور ڈراموں کی آن لائن سروس فراہم کرتی ہے

نیٹ فلیکس فلموں اور ڈراموں کی آن لائن سروس فراہم کرتی ہے

تانیہ زراک کی جانب سے دائر کی گئی درخواست میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ نیٹ فلیکس انتطامیہ نے انہیں 2018 میں اس وقت ملازمت سے فارغ کیا جب وہ امید سے ہوئیں۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ تانیہ زراک کو ایک ایسے وقت میں ملازمت سے فارغ کیا گیا جب وہ نیٹ فلیکس کے ایک موسیقی کے منصوبے پر کام کر رہی تھیں۔

تانیہ زراک کی جانب سے دائر کی گئی درخواست میں کہا گیا ہےکہ وہ 2018 کے آغاز میں حاملہ ہوئی تھیں اور انہیں نومبر 2018 میں ملازمت سے فارغ کردیا گیا۔

لاس اینجلس کی عدالت میں دائر کی گئی درخواست میں کہا گیا ہے کہ تانیہ زراک کو ملازمت سے نکالے جانے کے بعد انہوں نے اپنے مینیجر سے بھی اس کی شکایت کی، تاہم ان کے سپر وائزر نے انہیں تسلی دینے کے بجائے ان کے حمل کے حوالے سے نامناسب گفتگو کی۔

تانیہ زراک نے کمپنی پر ہرجانے کا دعویٰ بھی دائر کیا

تانیہ زراک نے کمپنی پر ہرجانے کا دعویٰ بھی دائر کیا

تانیہ زراک نے درخواست میں دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے اپنے سپروائزر کے نامناسب رویے کی شکایت ’ہیومن ریسورس‘ (ایچ آر) ڈیپارٹمنٹ سے بھی کی، تاہم بعد ازاں ان کے سپروائزر نے ایچ آر نمائندے کے سامنے انہیں ملازمت سے نکال دیا۔

نیٹ فلیکس کی سابق ملازمہ نے درخواست میں کہا ہے کہ مشکل وقت میں ملازمت سے نکالے جانے کی وجہ سے وہ کئی ذہنی و جسمانی مسائل کا شکار ہوگئیں اور انہیں مسلسل درد کی شکایات رہنے لگیں۔

تانیہ رزاک نے دائر کی گئی درخواست میں کہا ہے کہ ملازمت سے نکالے جانے کے بعد وہ نفسیاتی مسائل کا شکار ہونے سمیت کئی پریشانیوں میں مبتلا ہوگئیں اور تاحال ان کی ذہنی و جسمانی حالت درست نہیں۔

درخواست میں تانیہ رزاک نے نیٹ فلیکس پر حاملہ ہونے کے بعد ملازمت سے نکالے جانے کے خلاف لاکھوں ڈالر کے ہرجانے کا دعویٰ بھی دائر کیا اور عدالت سے درخواست کی کہ انہیں کمپنی سے رقم دلوائی جائے۔

انہوں نے اپنی درخواست میں خود کو ملازمت سے نکالے جانے کے عمل کو صنفی تفریق قرار دیا اور عدالت سے درخواست کی کہ کمپنی کے خلاف کارروائی کی جائے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *