گورنر سندھ عشرت العباد کے استعفیٰ کی چہ مگوئیاں

eshratکراچی میں ٹارگیٹڈ آپریشن کیخلاف متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کے احتجاج کے بعد گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد غیر معینہ مدت کے لیے دبئی روانہ ہوگئے ہیں جبکہ ان کے استعفیٰ سے متعلق قیاس آرائیاں بھی جاری ہیں۔

تاحال یہ بات واضح نہیں ہوسکی ہے کہ وہ کتنے عرصے کے لیے روانہ ہوئے ہیں جبکہ گورنر ہاؤس کی جانب سے بھی ان کی واپسی کی تاریخ نہیں بتائی گئی۔

گورنر سندھ کی روانگی کے بعد سندھ اسمبلی کے اسپیکر آغا سراج دررانی قائم مقام گورنر سندھ ہونگے۔

سیاسی حلقے سندھ  کی موجودہ سیاسی صورتحال میں گورنر سندھ کی اچانک بیرون ملک روانگی کو معنی خیزانداز سے دیکھ رہے ہیں۔

خیال رہے کہ وہ اس قبل بھی متعدد مرتبہ دبئی جاچکے ہیں اور استعفیٰ دے چکے ہیں۔

رواں سال کے آغاز میں لیاری گینگ وار کے ملزمان کے خلاف مقدمات واپس لینے کی خبروں کے بعد متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) نے حکومت سے علیحدگی کا اعلان کیا تھا جس کے بعد پارٹی نے موقف اختیار کیا تھا کہ گورنر بھی اپنا استعفیٰ پیش کردیں گے۔

تاہم بعد ازاں پارٹی قائد الطاف حسین کی تجویز پر انہوں نے اپنا استعفیٰ واپس لے لیا تھا۔

یہ پیشرفت ایسے موقع پر سامنے آئی ہے جب کراچی میں ٹارگٹڈ آپریشن جاری ہے جبکہ ایم کیو ایم کے سابق رکن صوبائی اسمبلی ندیم ہاشمی کو بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب دو پولیس اہلکاروں کو قتل کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔

سب سے طویل عرصہ تک گورنر شپ کا اعزاز رکھنے والے ڈاکٹر عشرت العباد خان کے بحیثیت گورنر سندھ گیارہ سال مکمل ہونے کو ہیں۔

سابق فوجی حکمراں پرویز مشرف نے ڈاکٹر عشرت العباد کو ستائیس دسمبر دو ہزار دو کو صوبہ سندھ کے گورنر کے طور پرنامزد کیا تھا۔

دو مارچ انیس سو تریسٹھ کو کراچی میں پیدا ہونے والے ڈاکٹر عشرت العباد خان نے پاکستان کے کم ترین عمر گورنر کا اعزاز حاصل کیا۔

گورنر سندھ  نے ساڑے پانچ سال سابق صدر پرویز مشرف کے دور حکومت میں اور ساڑے چار سال سابق صدر آصف علی زرداری کے دور حکومت میں گزارے ہیں۔

یاد رہے کہ انیس سو بانوے میں نواز شریف کی حکومت کے دوران کراچی میں ہونے والے آپریشن کے بعد وہ برطانیہ چلے گئےاورطویل عرصے تک برطانیہ میں جلا وطن رہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *